Browsing Tag

عوام

پاکستان میں کوئی بھی بحران جمود کو توڑنے اور اشرافیہ کے رویے کو بدلنے میں ناکام کیوں رہتا ہے؟

پاکستان ہمیشہ کسی نہ کسی بحران یا شدید مسئلے کا شکار رہتا ہے جس کے اثرات کا شکار زیادہ تر عام لوگ ہوتے ہیں۔ یہ ایک ایسا گھن چکر ہے جس میں عوام کو کبھی سکون کا وقفہ نہیں ملتا۔ اذیت در اذیت زندگیاں یونہی گزرتی ہیں۔ کچھ لوگ کوشش کرکے ملک سے…

متبادل مسیحا کی تلاش

شیخ ابراہیم ذوق کا کہنا ہے: اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے مر کے بھی چین نا پایا تو کدھر جائیں گے یہ شعر انسان کی فطرت کا صحیح عکاس ہے۔ یہ درست ہے کہ موجودہ صورتِ حال سے انسان کبھی مطمئن نہیں ہو تا، بالخصوص ایک ایسے معاشرے میں کہ…

احمقوں کی جنت

آج کل پاکستان کی سیاسی جماعتوں میں ’احمقوں کی جنت‘ کا بہت چرچا ہے۔ لیکن کوئی کھل کر یہ نہیں بتاتا کہ یہ احمق کون ہیں اور یہ جنت کہاں ہے۔ اتنا اندازہ تو ہو گیا ہے کہ یہ سب ایک دوسرے کو احمق اور احمقوں کی جنت کے رہائشی بتلاتے ہے۔ الیکشن سر پر…

ہمارے مذہبی رویے تحقیق پر نہیں، بلکہ تاریخ پر استوار ہیں

پہلے ایک واقعے کا ذکر کرتے ہیں، اور اس کا مقصد بلا کسی مسلکی رجحان پر زور دینے کے، صرف اور صرف یہ سمجھنا ہے  کہ بطور سماج بغیر کسی مسلکی و مذہبی تفریق کے، ہمارا مجموعی رویہ مذہب اور مذہب کے نام پہ پختہ ہوچکی ثقافت کے حوالے سے کیسا بن چکا…

عوام اور ملکوں کی قسمت ہیروز نہیں، خود عوام تبدیل کرتے ہیں

دُنیا میں ہر جگہ ایسا ہوتا ہے کہ سیاسی مبارزت اور رسہ کشی کے دوران بعض اوقات سیاسی و جمہوری اخلاقیات متأثر ہوتی ہیں اور نتیجے میں سماجی سطح پر ایک غیرشفاف ماحول پیدا ہوتا ہے اور لوگ ایک دوسرے کے ساتھ شدید اختلاف کا اظہار بھی کرتے ہیں۔ یہ اس…

پاکستان میں عوامی سطح پر دانشور کا کردار

ترقی یافتہ معاشروں میں دانشور کا عوامی سطح پر ایک کردار ہوتا ہے۔ یہ کردار دو دہائیاں قبل تک زیادہ وسیع اور مؤثر تھا کہ دانشور سیاسی اور سماجی منظرنامے میں مقتدرہ اور عوام کے مابین ایک ربط کی حیثیت سے موجود تھے۔ مگر سوشل میڈیا کے آنے کے بعد…

’اعتدال پسند‘ پاکستان کا انوکھا مقدمہ

پاکستان میں رہتے ہوئے معتدل یا جدیدیت پسند پرامن زنذگی گزارنے کے خواب کو حقیقت سے دور ایک تخیلاتی مفروضہ کہا جاسکتا ہے۔ بدقسمتی سے تاریخ نے یہی ثابت کیا ہے۔ پاکستان شاید دنیا کا واحد ایسا ملک ہے جو نظریاتی بنیاد پر بنایا گیا۔ ایک نظریہ جس…