کراچی: پاک انسٹیٹیوٹ فار پیس اسٹڈیز (PIPS) نے سیاسی جماعتوں اور سماجی حلقوں کے سامنے چارٹر آف پیس پیش کردیا

361

 

پاک انسٹی ٹیوٹ فار پیس اسٹڈیز (PIPS) نے 16 جنوری 2023 کو کراچی کے بیچ لگژری ہوٹل میں منعقدہ ایک پروقار تقریب میں اپنے “چارٹر آف پیس” کا تعارف کرایا۔

تقریب میں قانون سازوں، انسانی حقوق کے کارکنوں، ماہرین تعلیم، صحافیوں، طلباء، سیاسی جماعتوں کے اراکین اور سول سوسائٹی  کے ارکان اور دیگر نے شرکت کی۔

“چارٹر آف پیس (سی او پی)”یا میثاقِ امن اتفاقِ رائے کی ایک دستاویز ہے جو معتدل  نقطہ نظر اور سیاسی طریقوں کے ذریعے پاکستان میں دہشت گردی اور پرتشدد انتہا پسندی کا مقابلہ کرنے کے لیے کلیدی سفارشات پیش کرتی ہے۔ یہ ملک میں دیرپا امن کے حصول کے لیے قابل عمل اور پائیدار حل فراہم کرتی ہے۔

ڈائریکٹر PIPS محمد عامر رانا نے اپنے خیر مقدم کرتے ہوئے   کہا کہ یہ دستاویز قانون سازوں، پالیسی سازوں، ماہرین ِتعلیم، صحافیوں، نوجوانوں، سیاسی جماعتوں اور سول سوسائٹی کے نمائندوں سمیت متعدد اسٹیک ہولڈرز سے مشاورت کے طویل عمل کے بعد تیار کی گئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اس کا بنیادی مقصد معاشرے کے اندر موجودہ سماجی معاہدے کی ازسرنو وضاحت اور تجدید کرنا تھا۔ “کسی بھی قسم کے تصادم سے بچنے کے لیے سوشل کنٹریکٹ کو درپیش چیلنجوں سے نمٹنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔” انہوں نے یہ بھی وضاحت کی کہ یہ دستاویز ” چارٹر آف ڈیمانڈ” نہیں ہے بلکہ یہ دراصل ملک میں امن قائم کرنے کے لیے شہریوں کی جانب سے ظاہر کیے گئے عزم کی عکاس ہے۔

پروگرام مینیجر PIPS احمد علی نے “چارٹر آف پیس” کے اہم نکات پر روشنی ڈالی اور کہا کہ یہ دستاویز ایک جامع عمل کے ذریعے تیار کی گئی ہے۔ ” ہم پاکستان کے شہری امن اور جمہوریت پر یقین رکھتے ہیں، تمام مذاہب اور مسالک  کا احترام کرتے ہیں، اپنے  نسلی و لسانی تنوع کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں اور برابری کے شہری حقوق کا مطالبہ کرتے ہیں۔ ” چارٹر کے نکات میں سے ایک ہے۔ اسی طرح ایک اور شق  میں لکھا ہے ، “ہم آئین کے تقدس کی تصدیق کرتے ہیں اور پاکستان کے تمام حصوں میں آئین کے یکساں اطلاق کا مطالبہ کرتے ہیں۔”

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رکن قومی اسمبلی (ایم این اے) آفتاب جہانگیر نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے عوام کو آئینی خواندگی دینے پر زور دیا۔ انہوں نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ زیادہ تر لوگوں خصوصاً قانون سازوں کو آئین کے بنیادی آرٹیکلز کے بارے میں کوئی علم نہیں ہے۔ انہوں نے وضاحت کی کہ یہی وجہ تھی کہ قانون سازوں کو ضرورت کی بنیاد پر آئین کی تشریح کے لیے سپریم کورٹ اور اعلیٰ عدلیہ سے رجوع کرنا پڑتا ہے۔

جہانگیر نے قومی اور صوبائی اسمبلیوں کے اراکین اور بلدیاتی نمائندوں کو تربیت فراہم کرنے کے بارے میں بات کی کہ وہ کسی بھی متعلقہ ایوان میں اپنا کردار کیسے ادا کر سکتے ہیں۔ انہوں نے ملک کے عدالتی نظام اور سول بیوروکریسی میں اصلاحات لانے پر بھی زور دیا۔ انہوں نے تمام گناہوں کا ذمہ دار سیاستدانوں کو ٹھہرانے کی بجائے کسی بھی غلط کام کے لیے صحیح ادارے کو جوابدہ بنانے پر زور دیا۔

سندھ اسمبلی میں متحدہ قومی موومنٹ پاکستان (MQMP) کی پارلیمانی لیڈر محترمہ رانا انصار   نے میثاقِ امن کی اہمیت کی توثیق کرتے ہوئے کہا کہ سیاسی جماعتوں کو اس دستاویز کو سنجیدگی سے لینا چاہیے، اس پر بحث کرنی چاہیے اور معاشرے میں امن کو یقینی بنانے کے لیے اس پر کام کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ سیاسی جماعتیں اپنے منشور میں قیام امن کو شامل کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ارکان پارلیمنٹ کو توجہ دلاؤ نوٹس اور قراردادوں جیسے مختلف ٹولز کے ذریعے پارلیمنٹ میں اس موضوع پر بحث شروع کرنی چاہیے۔

انہوں نے وعدہ کیا کہ وہ اپنی پارٹی  یعنی  ایم کیو ایم کے فورم پر چارٹر پر بحث کریں گی  اور اسے اسمبلی کے فلور پر متعارف کرائے گی ۔ ان کا کہنا تھا کہ میں دیکھوں گی کہ اس سے  قانون سازی  کے لیے مواد کیسے نکالا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا، ” ملک میں امن قائم کرنے کے لیے ایک مضبوط نظام کی ضرورت ہے، جو صرف اس وقت قائم ہو سکتا ہے جب لوگوں میں اپنے حقوق کے بارے میں آگاہی ہو اور وہ اس کا مطالبہ کریں۔”

Charter Of Peace Launching
چارٹر آف پیس

سندھ اسمبلی میں ایم کیو ایم پی کے ڈپٹی پارلیمانی لیڈر علی خورشیدی کا کہنا تھا کہ آئین ایک جامع دستاویز ہے جس میں امن کے حصول سے لے کر شہریوں کو تعلیم کی فراہمی تک تمام مسائل کا احاطہ کیا گیا ہے لیکن مسئلہ اس پر عمل درآمد کا فقدان ہے۔ انہوں نے کہا کہ “سیاسی جماعتیں خود ذمہ داری لینے کے لیے تیار نہیں ہیں،” انہوں نے مزید کہا کہ انہیں پختگی کا مظاہرہ کرنا چاہیے اور اپنے مفادات کو ایک طرف رکھنا چاہیے۔

ایم پی اے خورشیدی نے اس بات پر زور دیا کہ سیاسی جماعتوں کو ملٹری اسٹیبلشمنٹ کو نشانہ بنانے کے بجائے بلیم گیم سے باہر آنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ “تمام گناہوں کا الزام اسٹیبلشمنٹ پر ڈالنا ناانصافی ہے،اسٹیبلشمنٹ تب کھیلتی ہے جب سیاسی جماعتیں اسے کچھ جگہ دیتی ہیں۔”

انہوں نے کہا کہ  ہمیں  میثاقِ امن  میں درج  موضوعات پر تسلسل کے ساتھ بحث کرنی چاہیے اور اس بحث کے تعدد  میں اضافہ کرنا چاہیے جو کہ موجودہ غیر مستحکم صورتحال کو بہتر کرنے کا واحد راستہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کو کچھ ایسے نکات پر اتفاق کرنے کے لیے بات چیت شروع کرنی چاہیے جو معاشرے میں پرتشدد،  انتہا پسندی اور دہشت گردی کا مقابلہ کرنے میں مددگار ثابت ہوں۔

پی ٹی آئی کی رکن سندھ اسمبلی محترمہ ادیبہ حسن نے ریمارکس دیئے کہ پاکستان کے عوام ہی حقیقی قوت ہیں جو معاشرے میں امن قائم کرسکتے ہیں۔ انہوں نے عوام کے مسائل کے حل میں سیاسی جماعتوں کے کردار پر بھی سوال اٹھایا۔ انہوں نے کچی آبادیوں اور کچی آبادیوں میں رہنے والے لوگوں کے لیے کام کرنے اور ان علاقوں میں ترقیاتی کمیٹیاں بنا کر انہیں ملک کی ترقی میں کچھ کردار ادا کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

ایم کیو ایم پی کے رکن سندھ اسمبلی محمد عباس جعفری نے ملک میں دہشت گردی اور انتہا پسندی کے انسداد کے لیے نیشنل ایکشن پلان (این اے پی) پر عملدرآمد پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ کراچی میں امن کو یقینی بنانا ملک بھر میں امن کے قیام کی کلید ہے۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ پورٹ سٹی کے لوگوں کو تعلیم اور ترقی کے یکساں مواقع فراہم کیے جائیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ہمیں چاہیے کہ ہم کہ  CoP پر بحث کریں، اس پر کام کریں اور امن کے حصول میں اپنا کردار ادا کریں۔

ماہر تعلیم اور محقق پروفیسر سکندر مہدی نے کہا کہ میثاقِ امن  ایک تاریخی دستاویز بن سکتا ہے لیکن سب سے بڑا چیلنج یہ  ہے کہ اسے آگے کیسے بڑھایا جا سکتا ہے کیونکہ یہ امن کے  عمل سے منسلک ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب ہم   قومی معیشت کے بارے میں بات کرتے ہیں تو ہمیں “جنگی معیشت اور فوجی معیشت” کو نہیں بھولنا چاہیے۔

مہدی نے زور دے کر کہا کہ “تعلیمی اداروں میں اساتذہ اور طلبہ دونوں غلام بن چکے ہیں اور اس کے نتیجے میں ملک میں تبدیلی کی فکری تحریک اور امن کے لیے فکری تحریک کی کوئی ساکھ نہیں رہی”۔ انہوں نے اس بات پر بھی روشنی ڈالی کہ لوگوں کو اساتذہ کا احترام کرنا چاہئے اور انہیں بات چیت میں کچھ جگہ دینا چاہئے۔ ساتھ ہی انہوں نے اساتذہ کو نصیحت کی کہ وہ معاشرے کو بدلنے کے لیے نصابی کتب سے باہر نکلیں کیونکہ وہ “تبدیلی کے پیامبر” ہیں۔ انہوں نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ میثاقِ امن  کو ان خطوط کے تحت آگے بڑھایا جانا چاہئے۔

انسانی حقوق کے کارکن اور صحافی سہیل سانگی نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ چارٹر آف پیس  میں استعمال ہونے والا لفظ “ہم، پاکستان کے عوام” ایک بہت ہی “غالب عنصر” تھا اور اسے بار بار دہرانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے آئین کو مکمل طور پر نافذ کرنے پر زور دیا۔

سانگی نے کہا کہ انہیں چارٹر میں اس بات کا اعادہ کرنا چاہئے کہ پارلیمنٹ سپریم ہے اور کسی دوسرے ادارے کو یہ حق نہیں ہے کہ وہ آئین میں بیان کردہ اس کے کردار کو غصب کرے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ معاشرے میں مذہبی انتہا پسندی جو تشدد کی شکل اختیار کر چکی ہے، اس پر قابو پانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ میثاقِ امن  کو مزید مضبوط بنانا  اور اسے آگے بڑھایا جانا چاہئے۔

اسکالر اور مصنف غازی صلاح الدین نے کہا کہ میثاقِ امن  جمہوریت کی بقا اور پاکستان میں انسانی حقوق کو یقینی بنانے کے لیے ملک کی غیر جمہوری قوتوں کے خلاف رائے قائم کرنے کی جدوجہد کا حصہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ مایوسی کی موجودہ فضا میں شہریوں کا کردار اہم ہے۔ “ایک شہری کو اپنی ذمہ داریوں کو سمجھنا چاہیے، یہی صورت حال کو بہتر کرنے کا واحد راستہ ہے۔” انہوں نے کہا کہ جمہوری اقدار کی موجودگی کے ساتھ ساتھ ملک کو بچانے کے لیے ایک “فکری اور اخلاقی تحریک” بھی ضروری ہے۔ انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ معاشرے میں “فکری محرومی”  موجود ہے۔

اینکر پرسن اور مصنف وسعت اللہ خان نے چارٹر کے تمام موضوعات پر اپنے خیالات کا اظہار کیا اور کہا کہ پاکستان کے تمام حصوں میں آئین کے یکساں اطلاق کے بارے میں اس کا نکتہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے کیونکہ اس میثاق کے بہت سے دیگر موضوعات اس سے جڑے ہوئے ہیں۔ انہوں نے  دستاویز کے ایک اور تھیم پر زور دیا جس میں “تعلیمی اصلاحات لانے کا مطالبہ کیا گیا ہے، جس کا مقصد نصابی کتب سے نفرت انگیز، امتیازی اور غیر حساس مواد کو ہٹانا ہے اور مزید سائنسی تحقیقات، مباحثے، اور تنقیدی سوچ اور استدلال کو شامل کرنا ہے۔”

صحافی اور اینکر پرسن فیاض نائچ کا کہنا تھا کہ امن مخالف خیالات رکھنے والے لوگ سخت اور مضبوط بیانیہ لے کر آتے ہیں  ۔  یہ اس بات کی وجہ ہے  کہ ہمیں امن کے اپنے بیانیے پر بھی زور دینا پڑے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں یہ مطالبہ بھی کرنا ہوگا کہ آئین کی منسوخی ایک سنگین جرم ہے اور ان تمام لوگوں کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جائے جنہوں نے ماضی میں اسے منسوخ کیا ہے۔

نائچ کا کہنا  تھا کہ مسئلہ یہ ہے کہ وہ آئین کا احترام کرنے کے لیے تیار نہیں تھے  جو کہ معاشرے کے اندر رسمی سماجی معاہدہ تصور ہوتا ہے۔ انہوں نے ریمارکس دیئے کہ بات چیت ہی ایک دوسرے کو سمجھنے اور ملک میں امن کو یقینی بنانے کے لیے آواز کو مضبوط کرنے کے لیے ایک پلیٹ فارم بنانے کا واحد ذریعہ ہے۔

اینکر پرسن و چیئرمین یوتھ پارلیمنٹ رضوان جعفر نے کہا کہ جمہوریت کے تسلسل سے عوام کے مسائل حل ہوں گے۔ انہوں نے ملک میں جمہوریت کی حمایت کے لیے بلدیاتی نظام کو مضبوط بنانے پر زور دیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ پارلیمنٹ میں بیٹھے قانون سازوں کو پاکستان میں موجودہ سیاسی افراتفری کے خاتمے کے لیے کام کرنے کی ضرورت ہے۔

جعفر نے دعویٰ کیا کہ ریاست شہریوں کو زندگی کی بنیادی ضروریات بشمول امن، صحت، تعلیم اور آمدورفت فراہم کرنے میں ناکام رہی ہے اور ہر خاندان کے  بجٹ کا بڑا حصہ  اپنے طور پر ایسی بنیادی  ضروریات حاصل کرنے کے لیے خرچ کیا جاتا ہے جو ریاست کی ذمہ داری  میں شامل ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ بعض لوگوں نے نسل، زبان یا عقیدے کی بنیاد پر اپنے مفادات پر مبنی گروہ یا “چھوٹی چھتریاں” بنا رکھی ہیں کیونکہ ریاست بنیادی ضروریات زندگی کی فراہمی کی اپنی ذمہ داری پوری کرنے میں ناکام رہی ہے۔ انہوں نے کہا، “اس طرح کی ذہنیت انتہا پسندی اور تشدد کو جنم دیتی ہے” ۔ “ملک میں پائیدار امن قائم کرنے کے لیے ریاست کو اپنے شہریوں کا مالک ہونا چاہیے۔”

ایڈیٹر اور انسانی حقوق کی کارکن وینگاس نے مساوی شہریت لانے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ اقلیتوں کے مسائل، خصوصاً جبری تبدیلی مذہب کا چارٹر میں خاص طور پر ذکر کیا جانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی دھارے کی جمہوری سیاسی جماعتیں اقلیتوں کے لیے آواز نہیں اٹھا رہی ہیں اور معاشرے کے ان محروم طبقات کے ساتھ ان کا رویہ غیر منصفانہ ہے۔ “ریاست کو غیر مسلموں کو مساوی شہری سمجھنا چاہیے اور ان کی ملکیت ہونی چاہیے، جو کہ پاکستان کے معاملے میں اس کے برعکس ہے۔”

ایم کیو ایم پی کے سابق ایم این اے ریحان ہاشمی نے اپنے اختتامی کلمات میں ملک میں امن قائم کرنے میں سیاسی جماعتوں کے کردار پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے کہا کہ معاشرے کو عدم برداشت اور شدت پسندی  کے مسئلے کا سامنا ہے، جس کی جھلک سیاسی جماعتوں کے کارکنوں میں بھی نظر آتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ سیاسی انتقام کا کلچر ختم ہونا چاہیے اور لوگوں کو ایک دوسرے کو کھلے دل سے قبول کرنا چاہیے۔

“اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ امن قائم ہو؛ تنازعہ کی بنیادی وجوہات کی نشاندہی، اور مصالحت اور ثالثی کے آلات کے ذریعے اس کا حل کچھ ضروری اقدامات ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ قوانین موجود ہیں لیکن ان پر عمل درآمد کے لیے طاقت اور قوت ارادی کا فقدان ہے۔

یہ آرٹیکلز بھی پڑھیں مصنف کے دیگر مضامین

فیس بک پر تبصرے

Loading...