فنون لطیفہ :زندہ معاشرے کی علامت

121

فنون لطیفہ اور شخصی آزادی فطرت کی عطا کردہ ہیں۔ ان سے انکار نہ صرف فطرت سے انکار ہے بلکہ معاشرہ کو انتہا پسندی کی جانب گامزن کرانے کی جانب ایک شعوری کوشش ہے۔ مہذب دنیاذہنی اور مادی ترقی کی معراج تک پہنچ چکی ہے مگر ہم آج اکیسویں صدی میں اس مسئلہ پر الجھ پڑے ہیں کہ عامر (گلناز) کو رقص کا حق حاصل ہے یا نہیں؟ شعور کی کس پست نہج پر ہیں ہم!
آج کے اس علمی دور میں اگر شخصی آزادی اور فنون لطیفہ پر قدغن کے حق میں دلائل دیے جائیں تومیرے نزدیک یہ شعور کی بانجھ پن ہی ہوگی۔
تاریخ کے اوراق پلٹ کر دیکھیں تو آپ مختلف مذاہب کے ماننے والوں کو ہمیشہ فنون لطیفہ کی حوصلہ شکنی کرتے ہوئے پائیں گے۔ جب آپ معاشرے میں انسان کی شخصی آزادی پر قدغن لگائیں گے، فنون لطیفہ کے آگے بند باندھیں گے، تو معاشرہ گھٹن کا شکار ہوکر انتہاپسندی کی طرف گامزن ہوگا، یہی وجہ ہے کہ باقی دنیا کی نسبت مذہبی معاشروں میں انتہاپسندی زیادہ دیکھنے کو ملتی ہے۔رجعت پسند افراد اگر عامر کے رقص کے خلاف جہاد کا نعرہ بلند کرتے توحیرانگی ہرگز نہ ہوتی، مگر ذہنی کوفت جس بات پر سب سے زیادہ ہوئی وہ یہ تھی کہ جن سینئر ساتھیوں سے روشن خیالی کے سبق کا الف ب ازبر کیا تھا، وہی مخالفت میں پیش پیش تھے۔ان دوستوں کی خدمت میں یہ گزارش ضرور کرنا چاہوں گا کہ فنون لطیفہ اور شخصی آزادی سے انکار معاشرے کو بانجھ پن کی طرف دھکیل تو سکتی ہے مگر تعمیر اور ترقی کی طرف ہرگز نہیں لے جا سکتی۔
آخری اور اہم بات یہ کہ جب بھی کسی رجعت پسند فکر اور عمل کے خلاف بات کی جائے تو آگے سے طنزاً کہا جاتا ہے کہ اپنے گھر سے شروعات کریں، تو اس پیرائے میں عرض کرتا چلوں کہ آپ شخصی آزادی کے حق کو یہ کہہ کر رد نہیں کرسکتے کہ چونکہ آپ کےگھر کے افراد ایسا نہیں کرتے لہذا یہ حق کسی کو بھی حاصل نہیں ہونا چاہیے اور یہ عمل یا فکر ناجائز ہے۔ میرے گھر کے افراد بھی تو اسی معاشرے میں رہ رہے ہیں جہاں پر یہ قدغن اور پابندیاں نافذ ہیں، معاشرے کے دیگر افراد کی طرح وہ بھی اس انسانی حق سے محروم ہیں۔ہم ایک ایسے معاشرے کی تشکیل چاہتے ہیں جہاں پر زندگی بسر کرنے والے سارے انسانوں کو یہ بنیادی انسانی حق حاصل ہو کہ وہ اپنی خواہشات کے مطابق اپنی زندگیاں گزار سکیں یا زندگیوں کا اہم فیصلہ خود کرسکیں۔میرے نزدیک ہر انسان کو یہ بنیادی انسانی حق حاصل ہونا چاہیے کہ وہ اپنی زندگی کس طرح گزارے ، کس طرح کے کپڑے پہنے، کس طرح کا کھانا کھائے، کس تعلیمی ادارے میں پڑھے، اپنی مرضی سے شریک حیات کا انتخاب کرے اور اس سے شادی کرے۔ یہ تمام اور اس جیسے دیگر ہم فیصلوں کا اختیار اس انسان کے علاوہ کسی اور کو نہیں کرنا چائیے-
اپنے ان دوستوں کی خدمت میں عرض ہے کہ میری طرف سے میرے گھر کے افراد پر کسی قسم کی کوئی پابندی نہیں ہے ،( میں ہوتا بھی کون ہوں کسی دوسرے انسان پر پابندی لگانے والا اور نہ ہی اس سوچ کا قائل ہوں ) میں شخصی آزادی کا قائل انسان ہوں۔ کسی بھی کام کے لیے کسی کو اس کی خواہش اور مرضی کے برخلاف مجبور نہیں کرسکتا، البتہ ایک ایسے معاشرے کی تشکیل کے لیے اپنی کاوش جاری رکھ سکتا ہوں کہ جہاں پر ہر انسان کو شخصی آزادی کا حق میسر آئے۔ فنون لطیفہ کو حوصلہ شکنی کے بجائے زندگی کا حصہ بنایا جائے۔ جب ایسا معاشرہ تشکیل پائے تو “سنج” (میری بیٹی) اپنی یونیورسٹی میں ہزاروں ناظرین کے سامنے رقص کریگی تو مجھے اس کی صلاحیت پر فخر ہوگا۔

یہ آرٹیکلز بھی پڑھیں مصنف کے دیگر مضامین

فیس بک پر تبصرے

Loading...