پاکستان میں سول ملٹری تعلقات: مثالی توازن کی تلاش

بریگیڈیئر (ر) راشد ولی جنجوعہ

183

ریاست اور حکومت میں طاقت کے سرچشمے اور ان کی باہمی ہم آہنگی اور آویزش سیاسیات، عمرانیات، اور دیگر متعلقہ علوم میں ہمیشہ سے بحث کا موضوع رہی ہے۔ ماہرین نے اس پر تواتر سے لکھا ہے اور کئی ایسے ماڈل پیش کیے گئے ہیں جن میں سول اور عسکری اداروں کے مابین مثالی اور متوازن ادارہ جاتی تعلقات تجویز کیے گئے ہیں۔ پاکستان کے تناظر میں سول ملٹری تعلقات کا معاملہ قیامِ پاکستان کے بعد کے معروضی حالات کے باعث جلد ہی معرضِ بحث میں آگیا اور اس پر تاحال گفتگو جاری ہے۔ بریگیڈئر (ر) راشد ولی جنجوعہ دفاعی امور کے ماہر ہیں۔ انھوں نے اس معاملے کو دقتِ نظر اور عالمی تناظر میں دیکھنے کی سعی کی ہے۔ اصل مضمون انگریزی میں ہے، ترجمہ قارئین “تجزیات” کے لیے پیش ہے۔

تعارف

کسی ملک میں سول ملٹری تعلقات جمہوریت اور ادارہ جاتی ہم آہنگی کے معیار کا ایک مثالی بیرومیٹر ہوتے ہیں۔ جمہوریت اور حکمرانی کے معیار کا تعین نہ صرف طرزِ حکومت سے ہوتا ہے بلکہ انتظامی کارکردگی سے بھی ہوتا ہے۔1  ایک مناسب مثال فرانس کی تیسری اور چوتھی جمہوریہ ہیں جنہوں نے قومی اسمبلی اور قومی بیوروکریسی کو اختیار تفویض کیا۔ جب 1950 کی دہائی میں، قومی اسمبلی اور بیوروکریسی کی مؤثر نوعیت فرانسیسی سلطنت کی تحلیل کو یقینی بنانے میں ناکام رہی، فوج نے حکمرانی کے خلا کو پُر کرنے کے لیے قدم بڑھایا جس کے نتیجے میں چارلس ڈیگال کا دور شروع ہوا۔2 روایتی اور نسبتاً سادہ سیاسی نظام جمہوری جدیدیت کی قوتوں کا مقابلہ کرتے ہوئے جمہوری اور اشرافیہ کی حکومت کے مخلوط نظام کے مقابلے میں اتنے لچکدار نہیں ہیں۔3 پال اسٹین لینڈ کے مطابق، خطرے کی نوعیت، سیاسی ادارہ سازی اور حکومتی قانونی حیثیت کے درمیان ایک پیچیدہ تعامل کسی ملک میں سول ملٹری تعلقات کی نوعیت کا تعین کرتا ہے۔4 اینوکریسی ایسی جمہوریتیں ہیں جو عبوری حالت میں ہیں جہاں جمہوری اداروں کی جڑیں تاحال مضبوط نہیں ہوسکیں اور اس وجہ سے بیوروکریسی، متشدد غیر ریاستی عناصر اور فوج جیسی غیر جمہوری قوتوں کی مداخلتوں کا شکار ہیں۔5  اس لیے سول ملٹری تعلقات جمہوری اداروں کی مضبوطی، بیرونی خطرات اور اندرونی سلامتی کے ماحول پر منحصر ہیں۔ فوج پر زیادہ سے زیادہ سویلین کنٹرول سول ملٹری تعلقات کے ماہرین اور ریاستی مقتدرہ کا مطمح نظر رہا ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ ایک فوج اتنی مضبوط ہے کہ وہ ویسا سب کچھ کر سکے جیسا اس کے سول حکمران اسے کرنے کے لیے کہتے ہیں، اور اتنی کمزور ہے کہ وہ ان سول حکمرانوں کا حکم بجا لائے۔

ہیرالڈ لاسویل جیسے اسکالرز اپنے گیریژن اسٹیٹ تھیوری اور ایس ای فائنر نے ‘گھوڑے پر سوار آدمی’ کے تصور کے ساتھ ایسی فوج کے خلاف خبردار کیا ہے جو مضبوط تنظیمی طاقت، نظم و ضبط اور نظریاتی رجحان رکھتی ہو اور کہا ہے کہ وہ سول سیاسی اداروں کو شدید خطرے کے ماحول میں رکھ کر ان کو گہناتی ہے۔7 ایسے نظریہ دان بھی ہیں جنہوں نے ہم آہنگ سول ملٹری تعلقات کو عسکری افادیت سے جوڑا ہے، اس طرح سول ملٹری ہم آہنگی کی شاندار نوعیت کو جنگوں میں فوج کے مؤثر کردار کی بنیاد قرار دیا ہے۔ پیٹر فیور نے ریاست کے فوجی اداروں پر سویلین کنٹرول کو ریاست کو درپیش بیرونی اور اندرونی خطرات کے درمیان جدلیات سے جوڑ دیا ہے۔ فیور کے مطابق، بہترین سویلین کنٹرول اس وقت استعمال ہوتا ہے جب کوئی ریاست زیادہ بیرونی لیکن کم اندرونی خطرات سے دوچار ہو۔ تاہم پاکستان کے معاملے میں مذکورہ نظریہ ہمارے تاریخی تجربے کے پیشِ نظر سچ قرار نہیں پاتا۔ غیر جمہوری قوتوں کے خلاف مضبوط سیاسی ثقافت اور مضبوط سیاسی اداروں کے بارے میں پال سٹین لینڈ کا تصور، کمزور جمہوریتوں کے معاملے میں زیادہ تفصیل سے جانچنے کے لائق ہے۔9  پاکستان جیسی جمہوریتوں کے لیے، ریاست کے سول ملٹری اداروں کے درمیان مثالی توازن تلاش کرنے کے لیے ریاست کے سویلین اور فوجی اداروں کے درمیان مثالی توازن کے تصور کی جانچ کرنا ضروری ہے۔ کنٹرول کی سب سے پرجوش شکل کیا ہے،اس کا جائزہ سیموئیل ہنٹنگٹن، لاس ویل اور ریبیکا شیف جیسے اسکالرز کے تجویز کردہ کنٹرول کے متعدد تصورات کے مؤثر ہونے کا تجزیہ کرکے لیا جاسکتا ہے۔ سول ملٹری تعلقات کی نوعیت اور تعلقات میں عدم توازن کی وجہ سے پیدا ہونے والے مسائل کو سمجھنے کے لیے مختلف ممالک کی کیس اسٹڈیز سے متعلقہ اسباق کے ساتھ پاکستان کے سول ملٹری تعلقات پر اسکالرز کے نقطہ نظر کو بھی اجاگر کیا جائے گا۔ سول ملٹری تعلقات کے معیار کو بہتر بنانے کے لیے اس عدم توازن کو کم کرنے کے لیے کچھ حل بھی تجویز کیے جائیں گے۔

سول ملٹری تعلقات سے متعلق نظریات

اگرچہ سیموئیل ہنٹنگٹن اور مورس جانووٹز جیسے اسکالرز نے سول ملٹری تعلقات کے بارے میں اپنی اپنی تشریحات کی ہیں، پھر بھی دونوں نے مسلح افواج کے سب سے زیادہ موثر سویلین کنٹرول کے لیے طریق کار تجویز کرنے کے بنیادی اصول پر اتفاق کیا۔ جہاں ہنٹنگٹن، معروضی اور موضوعی کنٹرول کے اپنے تصور میں، شہری کنٹرول کو بیرونی خطرات کے زاویے سے دیکھتا ہے، وہاں مورس جانووٹز نے مسلح افواج اور عام شہریوں کے درمیان قدری ہم آہنگی کے آئینے میں اس کا جائزہ لیا۔10 ہنٹنگٹن کے معروضی کنٹرول کے تصور کا مطلب فوج کی سیاسی غیرجانبداری کے بدلے میں شہریوں کی طرف سے مسلح افواج کو زیادہ سے زیادہ پیشہ ورانہ خودمختاری دینا ہے۔11معروضی کنٹرول فوج کی پیشہ ورانہ مہارت پر منحصر ہے، جسے ہنٹنگٹن “مہارت، ذمہ داری اور پیشہ ورانہ اہلیت ” کے مجموعے کے طور پر بیان کرتا ہے۔12 ہنٹنگٹن کے مطابق فوجی پیشہ ورانہ مہارت کے دو ضروری لوازم ہیں یعنی عملی اور سماجی۔ عملی لازمہ ریاست کو بیرونی اور اندرونی خطرات سے بچانا ہے، جب کہ سماجی لازمہ معاشرتی اقدار اور نظریے سے جڑے رہنا ہے۔13 فوجی پیشہ ورانہ مہارت کے ساتھ چیلنج یہ ہے کہ ریاست کو خطرات سے بچانے کے لیے عملی لازمے اور اس کی اقدار کے تحفظ کے لیے سماجی لازمے کے درمیان صحت مند توازن برقرار رکھا جائے۔ جمہوریتوں میں یہ فوج کی پیشہ ورانہ خودمختاری کے بجائے سویلین اختیار کی رضاکارانہ اطاعت میں بدل جاتا ہے۔

موضوعی کنٹرول سویلین کنٹرول کو استعمال کرنے کا ایک اور طریقہ تھا جس میں فوجی قیادت سویلین گورننس کے کاموں میں شامل تھی جس کے مقصد سے فوج کو ‘سویلین بنانے’ کی کوشش کی جاتی تھی تاکہ فوج کے لیے نظام میں مناسب حصہ مختص کیا جا سکے۔ مورس جانووٹز نے ایک غیر سیاسی فوج کے سماجی اقدار سے دور ہونے اور خود مختاری کے ذریعے بہت زیادہ طاقت حاصل کرنے پر تشویش کا اظہار کیا تھا۔ انہوں نے فوجی کردار کو ہمیشہ “ذمہ دار اور سویلین اتھارٹی کے پابند” رہنے کا مشورہ دیا تھا۔ سویلین فیصلہ سازی کے افعال میں فوج کی شمولیت دو مقاصد کے لیے تھی۔ ایک فوج کو براہ راست اقتدار سنبھالنے سے روکنا اور دوسرا سویلین سوسائٹی اور فوج کی اقدار کے درمیان خلیج کو ختم کرنا۔ ایسا کرتے ہوئے بہتر یہ سمجھا گیا ہے کہ فوج کی پیشہ ورانہ خود مختاری اور طاقت میں کمی کی جائے۔

ایک اور نظریہ جو پاکستان میں سول ملٹری تعلقات کے معاملے میں موزوں ہے وہ گیریژن اسٹیٹ کا تصور ہے۔ یہ تصور نیشنل سیکیورٹی اسٹیٹ کی تعریف کے قریب ہے جو نیلسن پالمیئر اور واریر اسٹیٹ ٹی وی پال نے دی ہے۔ پالمیئر کے مطابق، فوج قومی سلامتی کے مفادات کے لیے خطرات اور مذہبی بیانیہ کے تعین کے ساتھ سویلین اداروں پر غلبہ حاصل کرے گی۔16 ٹی وی پال ان ریاستوں کو جنگجو ریاستیں گردانتا ہے، جو قومی دفاع اور انسانی ترقی پر اخراجات کا استحقاق رکھتی ہیں۔ تاہم، وہ قومی سکیورٹی ریاستوں یا حاکمانہ ریاستوں اور گیریژن ریاستوں کے درمیان فرق کرتا ہے، اول الذکر کو فوجی معاملات پر قومی پالیسیوں کو ترجیح دینے کا پابند کرتا ہے اور مؤخرالذکر کو پالیسیوں کے ساتھ ساتھ قومی اقدار کی پاسداری کا پابند کرتا ہے۔17 گیریژن اسٹیٹ کا تصور ہیرالڈ لاسویل نے دیا تھا، جس کے مطابق جدید صنعتی معاشروں میں ایسی ریاست ابھرے گی جہاں تشدد کے ماہرین اپنی بہتر تنظیمی طاقت اور ریاست کے جبر کے آلات کی اجارہ داری کی وجہ سے قومی پالیسی کی تشکیل پر حاوی ہوں گے۔18 ایسی حالت میں، معاشرے کو ہر جگہ موجود بیرونی خطرے کے خلاف نظریاتی بیانیے کے ذریعے متوجہ رکھا جائے گا اور مسلح افواج کو مسلسل جنگ کی تیاری کی حالت میں رکھا جائے گا۔ ترقی اور انسانی سلامتی کو قومی سلامتی کے عسکری مرکزیت نظریے کے ماتحت کیا جائے گا۔

تمنا کی آنکھ سے دیکھیں تو سول ملٹری تعلقات کے چند سانچے ہیں جن کی نشاندہی ہنٹنگٹن جیسے اسکالرز نے کی ہے۔ سول ملٹری تعلقات کے پانچ سانچوں کی درجہ بندی کسی ریاست کے فوجی اور مخالف فوجی نظریے کی بنیاد پر کی جاتی ہے جس میں سیاسی طاقت اور پیشہ ورانہ مہارت کے دو متغیر ہوتے ہیں۔19   عسکری مخالف نظریات کے دو سانچے ہیں۔ پہلا کم عسکری پیشہ ورانہ مہارت اور اعلیٰ سیاسی طاقت کی نمائندگی کرتا ہے جو کہ یا تو پسماندہ ممالک یا جدید ممالک کی طرف اشارہ کرتا ہے جہاں خطرات اچانک نمودار ہوتے ہیں۔ دوسرا ان ممالک میں عسکری مخالف نظریے کی نمائندگی کرتا ہے جن کی فوجیں کم فوجی پیشہ ورانہ مہارت اور کم سیاسی طاقت کی حامل ہیں جیسے مطلق العنان ریاستیں جیسےدوسری جنگ عظیم کے دور کا جرمنی۔ تیسرا وہ ممالک ہیں جن کا عسکری مخالف نظریہ ہے، جس کی فوج کم سیاسی طاقت اور اعلیٰ فوجی پیشہ ورانہ مہارت رکھتی ہے جیسا کہ امریکہ۔ چوتھے زمرے میں فوج کے حامی نظریے والے ممالک شامل ہیں جہاں فوج اعلیٰ سیاسی طاقت اور اعلیٰ پیشہ ورانہ مہارت رکھتی ہے جیسے کہ اسرائیل اور پاکستان۔ پانچویں قسم اعلیٰ پیشہ ورانہ مہارت کے ساتھ کم فوجی سیاسی طاقت کے ساتھ عسکری نظریہ ہے جیسے برطانیہ۔20 تمنا کی سطح پر دیکھیں تو کسی ملک کو اس پانچویں طرز کی تقلید کرنی چاہیے۔

فوج کی طرف سے رضاکارانہ طور پر سویلین اتھارٹی کے ماتحت ہونے کی اخلاقیات کو داخلی سطح پر اپنانے کی ضرورت کو دو اسکالرز نے اجاگر کیا ہے، جو مائیکل ڈیش کے ساختی نظریہ کے ذریعے طے شدہ رویے کے استدلال کو چھوڑ کر ایک ادارہ جاتی اصول کی بنیاد پر سول ملٹری ہم آہنگی کی دلیل دیتے ہیں جو ہر حال میں فوج کو سویلین حکمرانوں کے ماتحت کرنے کی بات کرتا ہے۔ پیٹر فیور کا ‘پرنسپل’ اور ‘ایجنٹ’ کا فریم ورک جس کے مطابق سویلین بطور ‘پرنسپل ‘کام کرتے ہیں جن کی’ایجنٹوں’ یعنی فوج کو ہر حال میں اطاعت کرنی چاہیے۔ یہاں تک کہ وہ سول حکمرانی کو یقینی بنانے کے لیے جدید مواصلاتی ذرائع پر مبنی ایک مداخلتی نگرانی کا طریقہ کار تجویز کرتا ہے۔ فیور کے مطابق، سویلین حکمران پالیسی فیصلہ سازی کے لیے بہترین ہیں اور فوج کو ہمیشہ اپنے حکمرانوں کی حمایت میں کام کرنا چاہیے چاہے حالات کچھ بھی ہوں۔21 ربیکا شِف کی طرف سے پیش کردہ ہم آہنگی کا نظریہ متوازن سول ملٹری تعلقات کی مربوط نوعیت کو مزید گہرا کرنے کے ساتھ مذکورہ بالا باتوں کا اعادہ کرتا ہے۔ ہنٹنگٹن کے نظریات کے برخلاف جو سول اور فوجی شعبوں کی علیحدگی کا پرچار کرتے ہیں، ہم آہنگی کا نظریہ سیاسی اداروں، مسلح افواج اور شہریوں کے انضمام کا پرچار کرتا ہے۔ سیاسی اشرافیہ، مسلح افواج اور عوام کے درمیان مکمل ہم آہنگی ہوسکتی ہے اگر پالیسی سازی کو سول حکمرانوں پر چھوڑ دیا جائے۔22 سیاست میں فوجی مداخلتوں سے دامن بچایا جا سکتا ہے، اگر شہری، سیاسی قیادت اور فوج کی تثلیث چار اشاریوں پر اتفاق رائے حاصل کر لے جن میں فوجی افسران کے طبقے کی سماجی تشکیل، سیاسی فیصلہ سازی کا عمل، بھرتی کے طریقےاور عسکری طرزِ عمل شامل ہیں۔23   ہم دیکھیں گے کہ کیا پاکستان کے معاملے میں سول ملٹری تعلقات کو مضبوط بنانے کے لیے یہ اتفاق رائے حاصل ہوا ہے۔

پاکستان میں سول ملٹری تعلقات کا ارتقاء

پاکستان کے سول ملٹری تعلقات ایک سیاسی ثقافت کے تحت پروان چڑھے جس نے حکمرانی کے ڈھانچے اور روایات کی نوآبادیاتی طرز کو برقرار رکھا۔ برطانوی نوآبادیاتی حکمرانی ریاست کی طاقت پر انحصار کے ساتھ محصولات کے حصول کے ڈھانچے پر مبنی تھی۔ فوج، بیوروکریسی اور جاگیرداروں پر انحصار نوآبادیاتی طرز حکمرانی کا مرکز تھا، جسے پاکستانی ریاست کے نئے طرز حکمرانی کے ڈھانچے میں شامل کر لیا گیا تھا۔24 جس طرح پہلے حملہ آوروں نے ہندوستان میں گیریژن ٹاؤنز کا نیٹ ورک بنایا تھا، اسی طرح انگریزوں نے بھی ایسا ہی نیٹ ورک بنایا تھا جس نے گیریژن ٹاؤن جیسے انتظامی ڈھانچے کو جنم دیا۔25 برطانوی نوآبادیاتی دور میں کمانڈر انچیف (CinC) کو جمہوری ممالک کے مقابلے میں بے مثال حیثیت حاصل تھی۔ کمانڈر انچیف نے ہز ایکسی لینسی کا خطاب حاصل کیا اور وائسرائے کے بعد دوسرے نمبر پر رہا۔ وہ گورنمنٹ آف انڈیا ایکٹ 1919 کے مطابق وائسرائے کی ایگزیکٹو کمیٹی اور بالائی مقننہ کا رکن بھی تھا۔ اس کے حاصل کردہ زیادہ تر اختیارات گورنمنٹ آف انڈیا ایکٹ 1935 میں برقرار تھے۔27 حکومت کی منظوری کے بغیر دوسری جنگ عظیم میں ہندوستانی حکومت نے اپنے کمانڈر انچیف کو 25 ویں پوزیشن پر رکھنے کے لیے نوآبادیاتی وارنٹ آف پریزیڈنس کو تبدیل کیا، لیکن پاکستان میں اس طرز عمل کی پیروی نہیں کی جاسکی۔

پاکستان کے سول ملٹری لٹریچر میں فضل مقیم، الطاف گوہر، جی ڈبلیو چوہدری، پرویز اقبال چیمہ، پرویز مشرف، گل حسن اور سیموئل ہنٹنگٹن جیسے لکھاری موجود ہیں جو سویلین نااہلی اور کمزور سیاسی اداروں کی بنیاد پر سیاست میں فوجی مداخلت کا جواز پیش کرتے ہیں۔ سیموئل ہنٹنگٹن نے جنرل ایوب خان کی فوجی مداخلت کو پاکستان کے لیے ایک مثبت جدت پسند تجربہ قرار دیا۔29 تاہم عاقل شاہ، سعید شفقت، شیر علی، سعدیہ طور، کرسٹین فیئر، عائشہ صدیقہ، نسیم زہرہ، ٹی وی پال، اشتیاق احمد، اصغر خان، شیر باز مزاری اور عائشہ جلال جیسے ماہرین ایک متخالف نقطہ نظر رکھتے ہیں اور سیاست میں فوج کی مداخلت کو فوج کے سیاسی طاقت کے حصول کے عزائم کے طورپر دیکھتے ہیں۔ حمزہ علوی، محمد وسیم، اعتزاز احمد اور لارنس زیرنگ جیسے ہیئت پسندوں کا ایک اور طبقہ ہے جو کہ نوآبادیاتی ریاست کے زیادہ ترقی یافتہ ڈھانچے، بیرونی خطرات اور سیاسی اداروں کی کمزوری کو قومی سیاست میں فوجی عروج کا ذمہ دار سمجھتے ہیں۔ مثال کے طور پر حمزہ علوی نے ایک حد سے زیادہ ترقی یافتہ مابعد نوآبادیاتی ریاست اور کمزور مقامی بورژواطبقے کے درمیان تنازعہ کو قومی سیاست میں عسکری مرکزیت کے تصور کو فوج کے عروج کا ذمہ دار قرار دیا ہے۔ عائشہ جلال، حمزہ علوی کی تحقیق سے مختلف رائے رکھتی ہیں اور سیاسی قوت کے طور پر فوج کے ابھرنے کو فوج کے حددرجہ عزائم کا نتیجہ سمجھتی ہیں جبکہ اشتیاق احمد اسی کو فوج کے نظریاتی رجحان اور ملک میں ایک بڑے خطرے کے ماحول سے منسوب کرتے ہیں۔

چونکہ پاکستان کو آزادی کے وقت سے ہی بیرونی جارحیت کا سامنا تھا، اس لیے اس کی سیاسی قیادت کو قومی سلامتی کے اہم فیصلوں کے لیے غیر متناسب طور پر فوجی قیادت پر انحصار کرنا پڑا۔ کشمیر میں بھارتی جارحیت اور پھر قائداعظم محمد علی جناح کی برطانوی سی آئی سی کے ساتھ بات چیت نے انہیں افسروں کی کور کو مقامی بنانے کی ضرورت پر قائل کیا۔ 1947-48 میں کشمیر کی جنگ میں مواقع سے فائدہ نہ اٹھاپانے کی صورت حال نے پاکستان کے افسروں کی کور کے اندر ایک منحرف گروہ کو بھی جنم دیا جو جنگ کے دوران سویلین فیصلہ سازی کو بلاوجہ حقارت کی نگاہ سے دیکھتے تھے۔32 فوجی افسروں کے ایک گروپ نے کچھ سویلین کے ساتھ مل کر 1951 میں بغاوت کی کوشش کی کیونکہ سویلین کی طرف سے کشمیر کی جنگ کو ناکارہ طریقے سے لڑنے کی شکایت تھی۔ بغاوت کے رہنما چیف آف جنرل اسٹاف میجر جنرل اکبر خان تھے، جنہیں قائداعظم نے فوج میں ترقیوں کے بارے میں پالیسی میں تبدیلی کی تجویز دینے پر ایک بار سرزنش کی تھی۔33 قائداعظم اور لیاقت علی خان کی جلد رخصتی کے بعد، غلام محمد اور اسکندر مرزا جیسے بیوروکریٹس نے فوج کے ساتھ اتحاد بنا کر سیاست دانوں کو باہر کردیا۔ آئین ساز اسمبلی کے ذریعے آئین بنانے میں ریاست کے سویلین حصے کی ناکامی نے بیوروکریٹس کو اقتدار پر اپنی گرفت مضبوط کرنے کا موقع دیا۔ فوجی قیادت ابتدائی طور پر سیاسی طرز عمل کی اپنی برطانوی وراثت کے مطابق غیر سیاسی رہی، لیکن آہستہ آہستہ اسے ایک سازشی بیوروکریسی نے قومی سیاست میں داخل کر دیا۔

آئین پرستی کو پہلا شدید جھٹکا 1954 میں گورنر جنرل کی طرف سے آئین ساز اسمبلی کی برطرفی اور عدلیہ کی طرف سے غیر قانونی توثیق کی صورت میں لگا۔34  بیوروکریسی نے اپنے زبردستی کے اختیارات کو ذاتی تسلط کے لیے استعمال کرنے کے اپنے مقاصد کی بنا پر فوج کو سیاست میں داخل کیا۔35

فوج سیاسی کھیل میں ہچکچاہٹ کا شکار شراکت دار تھی کیونکہ کمانڈر انچیف جنرل ایوب نے محمد علی بوگرا کی حکومت کی برطرفی کے بعد 1953 میں گورنر جنرل غلام محمد کی طرف سے فوجی قبضے اور آئین کی تشکیل کی پیشکش کو واضح طور پر مسترد کر دیا تھا۔37 تاہم، 1954 میں جب جنرل ایوب خان نے گورنر جنرل غلام محمد کو وزیرِ اعظم چوہدری محمد علی کی کابینہ میں بطور حاضر سروس جنرل وزیرِ دفاع بننے کی پیشکش قبول کر لی۔37 اس وقت مارشل لا لگائے بغیر فوج نے حکومت کی باگ ڈور سنبھال لی تھی۔38 یہ وہ مقام تھا جہاں سے واپس پلٹنا فوج کے لیے کبھی ممکن نہ ہو سکا اور فوج کا کردار بیوروکریٹس اور کمزور سویلین سیاست دانوں کے حد سے بڑھے ہوئے عزائم کی وجہ سے سیاست میں در آتا چلا گیا۔ پاکستان میں 1947 اور 1958 کے درمیان سات وزرائے اعظم اور آٹھ کابینہ بدلیں، جبکہ کمانڈر انچیف صرف ایک ہی بدلا۔39 اس کا نتیجہ ایک ادارہ جاتی عدم توازن کی صورت میں نکلا جس کے نتیجے میں ایوب نے 1958 میں مارشل لا لگا دیا۔ 1969 میں ایوب کی معزولی کے بعد اقتدار کی باگ ڈور دوبارہ فوجی قیادت کے حوالے کر دی گئی۔ سیاسی اجتماعیت کے فقدان اور سیاسی جانبداری کے نتیجے میں 1971 میں بھارت کی طرف سے سرگرم اشتعال انگیزی کے ذریعے مشرقی پاکستان کی علیحدگی ہوئی۔40  وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو کا جمہوری عرصہ ان کی آمرانہ حکمت عملیوں کی وجہ سے سیاست کے ساتھ ساتھ سول ملٹری تعلقات میں مطلوبہ نتائج حاصل کرنے میں ناکام رہا۔ اگرچہ، انہوں نے ہائر ڈیفینس آرگنائزیشن کی تنظیم نو کی اور چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی کے ساتھ چیفس آف اسٹاف آف سروسز کی تقرریوں کے ذریعے قومی سلامتی کی فیصلہ سازی کو ادارہ جاتی بنانے کی کوشش کی۔ ان کی سیاسی مصروفیات اور تبدیل شدہ ترجیحات کی وجہ سے یہ اقدامات مطلوبہ نتائج حاصل نہ کر سکے۔ کابینہ اور دفاعی کونسل کی دفاعی کمیٹی کا قومی سلامتی سے متعلق فیصلہ سازی کے لیے ایک اعلیٰ فیصلہ ساز فورم کے طور پر متعارف کرانا مندرجہ بالا وجوہات کی بنا پر قابلِ ذکر نتائج نہ دے سکا۔ بھٹو ایسے پائیدار سیاسی اداروں کو قائم کرنے میں ناکام رہے تھے جو ملک کے سیاسی اور معاشی مسائل کو حل کرنے کے قابل ہوتے۔42

پاکستان کے بعد کے سیاسی سفر میں ضیاء اور مشرف کے دور کی شکل میں مزید فوجی مداخلتیں شامل تھیں جب کہ درمیانی وقفوں میں کمزور جمہوری حکومتیں آئیں۔ جمہوری سیاست کی روایت کے باوجود، پاکستان سیاسی اشرافیہ کے ادارہ جاتی مفادات اور ان مفادات سے بالاتر نہ ہونے کی وجہ سے اپنی سیاست کو جمہوری بنانے میں ناکام رہا۔43 کمزور سویلین ادارے اور ناقص گورننس ایک مقناطیس کے طور پر کام کرتے ہیں جو غیر جمہوری مداخلتوں کو دعوت دیتے ہیں۔44  فوج، بظاہر حب الوطنی کے بلند احساس سے آراستہ، مضبوط تنظیمی طاقت اور ادارہ جاتی یادداشت کو ساتھ ملا کر ریاست کے سویلین حکمرانوں کے پیداکردہ خلا کو ماضی میں باقاعدہ وقفوں کے ساتھ پُر کرتی رہی ہے۔ تاہم، موجودہ اور پچھلی دو سویلین حکومتوں کے ادوارقومی مفاد کے طور پر جمہوری تسلسل کے حق میں سول ملٹری تعلقات میں تبدیلی کی نشاندہی کرتے ہیں۔ اگرچہ مقالے کے اگلے حصے میں متوازن سول ملٹری تعلقات کے لیے مثالی حالات کے تجزیے سے ان تعلقات میں استحکام کے بارے میں دلچسپ نتائج برآمد ہوں گے، لیکن ربیکا شیف کے ہم آہنگی کے نظریہ کے چار اشاریوں کا فوری جائزہ مستقبل کے امکانات کی نشاندہی کرے گا۔ ہماری سول ملٹری ہم آہنگی کا پہلا اشاریہ، یعنی افسران کے طبقے کی سماجی تشکیل، ماضی کے مقابلے میں اب واضح تنوع کا اظہار کرتی ہے۔ سندھی، بلوچی اور سابق قبائلی علاقوں کے افسران کی تعداد میں اضافے کے ساتھ، بنیاد کافی وسیع ہو گئی ہے۔ دوسرا اشاریہ یعنی سیاسی فیصلہ سازی کے عمل میں بھی جمہوری تسلسل اور استحکام کے ذریعے بہتری آئی ہے، اگرچہ مزید بہتری کی گنجائش ابھی باقی ہے۔ تیسرا اشاریہ یعنی بھرتی کا طریقہ بھی اپنے وسیع ہونے کے لحاظ سے نمایاں بہتری کو ظاہر کرتا ہے۔ چوتھا اشاریہ یعنی عسکری طرزِ عمل بھی برطانوی دور کے احساسِ برتری سے رینک، درجہ بندی اور اسٹیٹس میں تبدیلیوں کو ظاہر کر رہا ہے۔45 مندرجہ بالا تجزیہ اس امر کی نشاندہی کرتا ہے کہ ملک کے سول ملٹری تعلقات بہتری کی جانب گامزن ہیں، حالانکہ اب بھی کئی طرح کی بہتری کی ضرورت ہے۔

DCAF کا پیمانہ اور پاکستان کے سول ملٹری تعلقات

مسلح افواج پر جمہوری کنٹرول کی سات اہم خصوصیات میں سب سے پہلے فوج کے “مشن، تشکیل، بجٹ اور خریداری کی پالیسیوں” پر سویلین حکام کا کنٹرول شامل ہے۔46 پاکستان کی سویلین قیادت کو آئین کے مطابق مذکورہ بالا تمام چیزوں پر کنٹرول حاصل ہے، لیکن کنٹرول کس درجے کا ہے، یہ حکومت کی شکل اور طرز حکمرانی کے معیار کے مطابق مختلف ہوتا ہے۔ یہ سویلین حکومتوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ یہ کام مسلح افواج کے ذمے لگانے کے بجائے مناسب ڈھانچے اور عمل کے ذریعے اپنی نگرانی کی صلاحیت کو بہتر بنائیں۔47 دوسری خصوصیت جمہوری پارلیمانی اور عدالتی اداروں، ایک مضبوط سول سوسائٹی اور ایک آزاد میڈیا کے ذریعے فوجی کارکردگی کی نگرانی ہے۔48  اس حوالے سے بھی، پاکستان کے سول ملٹری تعلقات کی حقیقت میں سول حکمرانوں کو تسلی بخش کنٹرول حاصل ہے۔ ہمارے پاس کافی فعال پارلیمانی کمیٹیاں، ایک متحرک سول سوسائٹی اور ایک آزاد میڈیا ہے جو فوج کو لوگوں کے ساتھ ساتھ حکومت کے سامنے جواب دہ بنا سکتا ہے، جو قومی سلامتی کی پالیسی سازی کے عمل میں شفافیت کا عنصر لاتا ہے۔ ایک بار پھر نگرانی کا معیار کمزور کڑی ہے جس میں پارلیمانی کمیٹیوں کو سخت سوالات پوچھ کر دفاعی امور میں مثبت کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔49 تیسری خصوصیت دفاعی امور میں سویلین حکمرانوں کی مہارت ہے۔ یہ ایک ایسا علاقہ ہے جہاں مسلح افواج کو موثر پالیسی رہنمائی فراہم کرنے کی صلاحیت کو بہتر بنانے کے لیے سویلین کی جانب سے نمایاں بہتری کی ضرورت ہے۔ DCAF معیار کی تیسری خصوصیت ملکی سیاست میں فوج کی عدم مداخلت ہے۔51 اس حوالے سے بھی آئینی پوزیشن واضح ہے اور پاکستان میں مسلح افواج آئینی دفعات کی پاسداری کرتی ہیں۔ مسئلہ اس وقت پیدا ہوتا ہے جب سویلین حکام خود فوج کو سویلین معاملات میں ملوث کرکے سیاست میں کھینچتے ہیں۔52 ایک فطری عمل کے طور پر سول حکومت کی مدد میں تعینات کی گئی فوج کے توسیعی کردار کو غیر فوجی کاموں پر فوج کی تعیناتی کو محدود کرکے روکا جانا چاہیے۔53 پانچواں معیار نظریاتی غیرجانبداری ہے۔ اس کسوٹی پر معاملہ یکساں ہے، کیونکہ پاکستان میں ریاست کے فوجی اور سول حکمران عام طور پر ملک کے نظریاتی رجحان پر ہم آہنگ ہوتے ہیں، سوائے اس کے کہ مسلح افواج بعض اوقات اخلاقیات یعنی معاشرے میں زیادہ قدامت پسند نظر آتی ہیں۔ اس خلیج کو زیادہ سول ملٹری تعامل اور پیشہ ورانہ فوجی تعلیم میں اصلاحات کے ذریعے ختم کیا جا سکتا ہے۔ چھٹا معیار قومی معیشت میں فوج کا کم سے کم کردار ہے۔ فوج ملک کے سب سے بڑے آجروں میں سے ایک ہو سکتی ہے، یا ہو سکتا ہے کہ قومی معیشت میں ایک اہم کردار ادا کر رہی ہو، لیکن اسے اس بات کا خیال رکھنے کی ضرورت ہے کہ اس کے معاشی مفادات اور سرگرمیوں کی وجہ سے شہری صنعتی شعبہ پریشانی میں مبتلا نہ ہو۔ پاکستان میں، ایسی تنقیدی آوازیں ہیں جو فوج کے کارپوریٹ مفادات کو قومی معیشت پر غیر مستحکم کرنے والے اثر و رسوخ کے طور پر پیش کرتی ہیں لیکن حقیقت کچھ اور ہے۔ پاکستان میں فوج نے اقتصادی پیداوار پر منفی اثر نہیں ڈالا ہے کیونکہ صنعتی سرگرمیوں میں اس کی شمولیت صرف سابق فوجیوں اور ان کے خاندانوں کے فلاحی منصوبوں تک محدود ہے۔ نیشنل لاجسٹک سیل اور فرنٹیئر ورکس آرگنائزیشن جیسی تنظیموں کا کردار بھی ان علاقوں میں قومی لاجسٹکس اور کمیونیکیشن انفراسٹرکچر کی بہتری تک محدود ہے جہاں کوئی شہری فرم خطوں، موسم اور سیکورٹی کے خطرات کی وجہ سے کاروبار کرنا پسند نہیں کرتی ہے۔ عائشہ صدیقہ جیسے ناقدین کی طرف سے ایسی تنظیموں کو ریاستی سبسڈی دینے کے الزامات درست نہیں ہیں، کیونکہ ایسی تمام تنظیمیں بہترین کارپوریٹ طریقوں اور ٹیکس کی تعمیل کے مطابق چلائی جاتی ہیں۔

ساتواں معیار فوج کے اندر ایک موثر ‘چین آف کمانڈ ‘کی موجودگی ہے جو فوج کے احتساب کو یقینی بنانے کے لیے سویلین کمانڈر ان چیف تک جاتا ہے۔ پاکستان میں، فوجی حکمرانی کے دوران، یہ معیار طے شدہ طور پر لاگو ہوتا تھا اور اس وقت آئینی انتظامات کے مطابق موجود ہے جس میں فوج صدر کے ساتھ ساتھ وزیر اعظم کے سامنے جواب دہ ہے، اور وزیر اعظم کے پاس سربراہِ حکومت کے طور پر آئینی اعتبار سے مسلح افواج پر موثر اختیار ہے۔ آٹھواں معیار مسلح افواج کے اہلکاروں کے جمہوری حقوق ہے۔ پاکستان میں، ماضی میں متواتر فوجی اقتدار سنبھالنے کی وجہ سے، یہ پہلو فوج کے اپنے ادارہ جاتی اور قانونی ماحول کے زیر سایہ رہا۔ موجودہ جمہوری ماحول میں، مسلح افواج کے اہلکار فوج کی قانونی حکومت کی مقرر کردہ حدود میں اپنے جمہوری حقوق سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔ ڈی سی اے ایف کے معیار کی روشنی میں پاکستان کے سول ملٹری تعلقات کا مجموعی جائزہ دونوں کے درمیان مثالی توازن کے لیے صحیح ڈھانچے اور قواعد کی موجودگی کی نشاندہی کرتا ہے۔ تاہم، فوج کو موثر پالیسی رہنمائی اور قیادت فراہم کرنے کے لیے سویلین نگرانی کے معیار میں بہتری کی ضرورت ہے۔

مختلف ممالک کے سول ملٹری تعلقات سے رہنمائی

اسرا ئیل

اسرائیلی دفاعی افواج (IDF) ایک ہمہ گیر بھرتی کے ماڈل کی پیروی کرتی ہیں اور قومی دفاع اور خارجہ پالیسیوں میں نمایاں اثر و رسوخ رکھتی ہیں۔ پاکستان کی طرح یہ ایک جمہوری ریاست ہے جو بیرونی خطرات کے ساتھ ساتھ اندرونی خطرات سے بھی دوچار ہے۔ انتہائی نظریاتی نوعیت اور خطرے کے بڑھتے ہوئے پروفائل کی وجہ سے، قومی سلامتی کے معاملات پر IDF کی سفارشات اکثر سیاسی اور اقتصادی تحفظات کی جگہ لے لیتی ہیں۔56  ملک کے متناسب نمائندگی کے نظام کی وجہ سے، سیاسی وزراء وزیر اعظم کو مؤثر طریقے سے جواب نہیں دیتے ہیں اور اس وجہ سے، IDF بہت مضبوط پالیسی منصوبہ بندی کی صلاحیت کو برقرار رکھتی ہے جو خود وزارت سے زیادہ وزیر دفاع کو جواب دہ ہے۔57  IDF کے پالیسی پلاننگ عملے کے ارکان سفارتی مذاکرات میں اکثر حصہ لیتے ہیں، قومی پالیسی کی تشکیل میں بہت زیادہ اثر و رسوخ استعمال کرتے ہیں۔ اسرائیلی چیف آف دی جنرل اسٹاف، جو IDF کے سربراہ ہیں، کابینہ کے تمام اجلاسوں میں شرکت کرتے ہیں اور قومی پالیسی کی تشکیل میں کافی اثر و رسوخ رکھتے ہیں۔ قومی پالیسی کی تشکیل میں IDF کے غیر متناسب اثر و رسوخ کے باوجود، اسرائیلی افسروں کی کور نے حکومت کی باگ ڈور سنبھالنے کا رجحان ظاہر نہیں کیا۔ مندرجہ بالا تحمل کی وجہ سویلین حکومت کی طرف سے مسلح افواج کو سویلین پالیسی کی تشکیل اور گورننس میں ضم کرکے ان پر داخلی کنٹرول کا استعمال ہے۔ جمہوریت کو کمزور کرنے والے حالات جیسے کمزور سیاسی جماعتیں، کمزور سیاسی ادارے، اور مسلح افواج اور عام شہریوں کے درمیان مشترکہ نظریاتی مقصد کی کمی58 اسرائیل میں موجود نہیں۔ تاہم، متناسب نمائندگی کے نظام اور اتحادی کابینہ کی وجہ سے قومی سلامتی سے متعلق فیصلہ سازی کو زیادہ سیاسی بنانے جیسے مسائل تھے۔ اسرائیلی وزرائے دفاع عام طور پر سابقہ ​​مسلح افواج کے افسران ہوتے ہیں جس کی وجہ ہمہ گیر بھرتی ماڈل کا ہے اور اس وجہ سے وہ دفاعی امور کے بارے میں زیادہ معلومات رکھتے ہیں۔59 IDF کے سابق افسروں کی سرکاری اور نیم سرکاری ملازمتوں میں شمولیت کو بھی ریٹائرمنٹ کے بعد ادارہ جاتی شکل دی جاتی ہے جو فوجی قیادت کو خدمت میں رہتے ہوئے سیاست میں براہ راست مداخلت سے باز رکھتی ہے۔

بولیویا اور وینزویلا

بولیویا اور وینزویلا دونوں میں سوشلسٹ حکومتیں تھیں جو سرمایہ دار ممالک کے لیے ناقابل قبول تھیں اور اس لیے ان ممالک کے ایما پر عدم استحکام کا شکار تھے۔60 بولیویا کے صدر ایوو مورالس کو امریکہ کی حمایت یافتہ بغاوت میں معزول کر دیا گیا۔ بولیویا میں سول ملٹری تعلقات اس پر مسلط ایک ہائبرڈ جنگ کے ذریعے کشیدہ بنائے گئے تھے۔ فوج اور پولیس دونوں کی قیادت کو امریکہ کے مشہور اسکول نے تربیت دی تھی، جو ان کے مغرب نواز رجحان کی وجہ سے امریکی ہدایات پر چلتے تھے۔ مورالس کو مقبولیت اور عوامی حمایت کے باوجود فوج اور پولیس کی فعال مخالفت کی وجہ سے اقتدار چھوڑنا پڑا۔ تاہم، بغاوت کرنے کے اسی ماڈل کو وینزویلا میں مقبول صدر نکولس مادورو کے خلاف بغاوت کی حمایت کرنے کے لیے امریکہ سمیت تقریباً 50 ممالک کی سرگرم کوششوں کے باوجود دہرایا نہیں جا سکا۔ یہ وینزویلا کے سول ملٹری تعلقات کے ماڈل میں سول اور فوجی طاقت کا امتزاج تھا، جس نے مادورو کو بچایا۔ 1990 کی دہائی میں شروع ہونے والی اصلاحات کے سلسلے میں، مسلح افواج کے متحد ڈھانچے میں تقسیم پیدا کر کے فوجی قیادت کی طاقت کو ٹکڑے ٹکڑے کر دیا گیا۔ وہ نظام، جس میں بغاوت کرنے والے کو آزاد کمانڈروں کا تعاون حاصل کرنا پڑتا تھا، اس نے 1992 تک جمہوری کنٹرول کا مقصد پورا کیا۔ ایک صدر کے طور پر انہوں نے مسلح افواج کی قیادت کی تقرریوں اور ترقیوں کو کنٹرول کرتے ہوئے ایک مضبوط چین آف کمانڈ کو یقینی بنایا۔ سول ملٹری اتفاق رائے کے نتیجے میں 11 اپریل 2002 کو صدر ہیوگو شاویز کے خلاف مطلوبہ بغاوت کی شکست ہوئی اور وہ 47 گھنٹوں کے بعد عوامی اور مسلح افواج کی حمایت کے ذریعے اقتدار میں بحال ہوئے۔ اس طرح مسلح افواج کو مناسب ترغیب دینا اور ان کی قیادت کو متعدد کمانڈز میں تقسیم کرنا، جو کہ براہ راست منتخب صدر کے کنٹرول میں ہیں، مسلح افواج کے موثر جمہوری کنٹرول کے لیے اہم سبق ثابت ہوئے۔

ترکی

ماضی میں سول ملٹری تعلقات کے ترک ماڈل نے ایک جمہوری نظام پر انحصار کیا ہے جس میں مسلح افواج آئین کے محافظ کے طور پر ایک مضبوط کردار کے ساتھ ساتھ علاقائی سرحدوں پر بھی انحصار کرتی ہے جسے ورول جیسے کچھ اسکالرز جمہوری اکثریت کے منفی پہلوؤں کا سدِباب تصور کرتے ہیں۔62 ترک فوج نے ترکی کی جنگ آزادی میں اپنے کردار کی وجہ سے قومی سیاست میں اپنا مضبوط اثر و رسوخ برقرار رکھا تھا۔ جب 1960 میں، مسلح افواج نے بغاوت کی تو انہوں نے آئین میں ایسی دفعات شامل کیں جو 1961 میں قومی سلامتی کونسل کے ذریعے ان کے کردار کو ادارہ جاتی بناتی تھیں۔ 1961 میں سویلین حکومت کو اختیارات واپس دینے کے بعد، فوج نے 1980 میں ایک اور بغاوت کی۔ قومی سلامتی کونسل میں سویلین ارکان کے ساتھ فوج کے پانچ مساوی ارکان رکھے گئے، اور صدر کا ووٹ فیصلہ کن قرار دیا گیا، جو عام طور پر فوج کا ساتھ دیتے تھے۔63 سیاست میں فوج کی مداخلت اگلے 17 سال تک جاری رہی جب 1997 میں ایک اور بغاوت ہوئی، جب سویلین وزیر اعظم کو فوج کی طرف سے اصلاحات کی فہرست دی گئی، جس پر انہوں نے اتفاق نہیں کیا اور استعفیٰ دے دیا۔64 سیاسی جماعتوں نے رجب طیب اردگان کی جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ پارٹی کی کرشماتی قیادت میں اپنی کارکردگی کو بہتر کیا۔ یورپی یونین کے جمہوریت نواز حالات، اور ترکی کی یورپی بلاک میں شمولیت کی خواہش نے جمہوریت نواز ماحول پیدا کیا جس نے بہتر طرز حکمرانی اور اقتصادی کارکردگی کے ساتھ مل کر سویلین حکومت کے لیے عوامی حمایت میں اضافہ کیا۔ توازن اتنا بدل گیا کہ جب 2011 میں، ترک فوجی قیادت نے حکومت کے ساتھ اختلافات پیدا کر دیے، اس نے بغاوت شروع کرنے کے بجائے خود استعفیٰ دے دیا۔ ترکی کے سول ملٹری تعلقات سے حاصل ہونے والے اسباق میں سیاست دانوں کے لیے اچھی حکمرانی کی اہمیت، خاص طور پر اقتصادی میدان میں اور مسلح افواج کو سویلین سیاسی امور اور فیصلہ سازی سے دور رکھنے کی ضرورت شامل ہے۔

انڈونیشیا

انڈونیشیا میں، سوئیکارنو مختلف نسلی برادریوں کے درمیان نازک توازن کو برقرار رکھتے ہوئے، جمہوری صدر رہے۔ تاہم، فوج نے 1967 میں بغاوت کا آغاز کیا، اور سہارتو کے دور حکومت میں دوائی فنگشی (دوہرے کردار) کے تصور کے تحت قومی سیاست میں اپنے لیے ایک سیاسی کردار کو ادارہ جاتی بنایا۔65 فوج کو منافع بخش کاروباروں میں شرکت کی ترغیبات کے علاوہ مرکزی کے ساتھ ساتھ صوبائی اور ضلعی مقننہ میں بھی اپنی موجودگی برقرار رکھنے کی اجازت دی گئی۔ اس کے باوجود فوج جمہوری اصلاحات اور قدامت پسند دھڑوں میں بٹ گئی۔ اصلاحات کے حامی دھڑے کی قیادت جنرل ویرانٹو اور یودھوانو کر رہے تھے، جنہوں نے فوج کو غیر سیاسی کرنے کی کوشش کی۔ مقننہ میں فوج کی موجودگی کو کم کرتے ہوئے کچھ اصلاحات متعارف کروائی گئیں، لیکن اس کا اثر سویلین نواز صدر عبدالرحمان اور فوج کے حامی صدر میگاوتی سویکرنوپتری کے دور میں بھی جاری رہا۔ فوج، جمہوری استحکام کے باوجود، اپنے دوہرے کردار کی وجہ سے انڈونیشیا کی سیاست میں اب بھی مضبوط اثر و رسوخ برقرار رکھتی ہے۔ کمزور سیاسی اور عدالتی اداروں، اور داخلی سلامتی اور حکمرانی کے کاموں کے لیے فوج پر سویلین حکومت کے انحصار کی وجہ سے، فوج اب بھی انڈونیشیا کی سیاست میں غیرمتناسب اثر و رسوخ برقرار رکھتی ہے جس سے مسلح افواج کے شہری جمہوری کنٹرول کو نقصان پہنچتا ہے۔66  انڈونیشیا کی مثال سے سبق یہ ہے کہ مسلح افواج کو ایک ادارہ جاتی کردار کے تحت بھی سیاست اور حکمرانی میں فعال شمولیت سے دور رہنے کی ضرورت ہے۔ عدلیہ اور پارلیمنٹ جیسے مضبوط اور آزاد اداروں کی زیادہ ضرورت ہے۔

پاکستان میں سول ملٹری توازن کا تجزیہ

مضبوط سیاسی ادارے، سیاست میں پرجوش عوامی شرکت اور اعلیٰ سیاسی جواز، سیاست میں فوجی مداخلت کو مشکل بنا دیتے ہیں۔67 مضبوط عدلیہ، آزاد الیکشن کمیشن اور آزاد میڈیا کے تحت بار بار ہونے والے انتخابات قومی سیاست میں جمہوری قوتوں کی مضبوطی کو یقینی بنائیں گے، جس سے سول ملٹری تعلقات میں انتہائی ضروری توازن قائم ہوگا۔ مسلح افواج کے لیے بھی فوجی بغاوتوں کی ادارہ جاتی یادوں کو مٹانے کے لیے یکے بعد دیگرے انتخابات اور ہموار جمہوری منتقلی ضروری ہے۔ اعجاز حیدر کے مطابق، پاکستان میں سول ملٹری تعلقات ایک ساختی خرابی کا شکار ہیں جہاں سویلین حالات پیدا کرتے ہیں اور فوجیوں کی قومی سیاست میں شرکت کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں۔69 ان کی شرکت کی حوصلہ شکنی کرنے کے لیے، انہیں طرزِحکومت کو بہتر کرنے کی ضرورت ہے۔70  موجودہ ماحول میں، جب ہائبرڈ جنگ کے خطرے نے بیرونی خطرات سے زیادہ اندرونی خطرات کو بڑھا دیا ہے، مائیکل ڈیش کا نظریہ قومی پالیسی کی تشکیل میں عسکری اور سویلین قیادت کو برابر اہمیت دیتا ہے۔71 ایسے ماحول میں سویلین قیادت تزویراتی فیصلہ سازی کی ذمہ داری سنبھالنے پر آمادگی ظاہر کرتی ہے اور فوج اس خلا کو پر کرتی ہے۔72 دائمی خطرات سے دوچار ریاستوں کے گیریژن ریاست میں تبدیل ہونے کا امکان ہے۔73 پاکستان کے معاملے میں، انتہائی خطرے کا ماحول اور کمزور سیاسی ادارے گیریژن ریاست کے وجود میں آنے کے خطرات کو بڑھاتے ہیں، لیکن ایک آزاد عدلیہ، ایک متحرک سول سوسائٹی اور بے باک سماجی اور مرکزی دھارے کا میڈیا ان خطرات کو کم کرتا ہے۔

شجاع نواز کے مطابق گیریژن اسٹیٹ کا تصور پاکستان جیسے ممالک میں سیاست دانوں کی تخلیق ہے، کیونکہ وہ ایک ایسا نظام تشکیل دیتے ہیں جو حکومت کا بوجھ فوج کی طرف منتقل کر کے دونوں کو فائدہ پہنچاتا ہے۔74 اپنی سیاسی کمزوری کی وجہ سے، سویلین حکمران اپنی حکومت کو استحکام فراہم کرنے کے لیے فوج کو غیر فوجی کاموں میں لگاتے ہیں۔ انڈونیشیا اور ترکی کے سول ملٹری تعلقات کے کیس اسٹڈیز سے نمایاں طور پر نمایاں ہونے والے اس رجحان کو سول ملٹری تعلقات میں توازن برقرار رکھنے کی ضرورت ہے۔ پاکستانی تناظر میں سول ملٹری تعلقات سول قیادت کی کارکردگی کے جواز کے ذریعے مثالی توازن حاصل کر سکتے ہیں۔75 آئینی طور پر طے شدہ معاملات کے علاوہ سول طاقت کی معاونت میں فوج کی بڑھتی ہوئی شمولیت سول ملٹری تعلقات میں عدم توازن کا باعث بنتی ہے اور اس لیے اس سے گریز کیا جانا چاہیے۔76 ایسے سیاسی نظام جو سیاسی جواز، کارکردگی اور مسلسل عوامی حمایت کے حوالے سے کمزوری کا شکار ہوں، سیاسی مداخلتوں کا شکار ہوتے ہیں۔77  پاکستان کے معاملے میں، یہ ہمارے سول ملٹری تعلقات پر سب سے بڑا مسئلہ رہا ہے۔ ماضی میں اپنی حکمرانی کے لیے فوج پر انحصار کرنے والی کمزور سیاسی جماعتوں نے معاشی طبقاتی تقسیم اور کم سماجی ہم آہنگی سے دوچار پاکستان کو بری طرح متاثر کیا ہے۔78

سول ملٹری عدم توازن کا اخلاقی اور فکری عنصر سیاستدانوں اور فوجی افسران کی تربیت، تعلیمی قابلیت اور اخلاقی اقدار کے مابین خلیج پر مشتمل ہے۔ پاکستان میں فوج، قوم کے محافظ کے طور پر اپنے امیج کی وجہ سے ایک مقدس حیثیت کی حامل سمجھی جاتی ہے، اپنے افسروں کے طبقے کو، اخلاقی اور فکری طور پر، میدان جنگ میں اور باہر قیادت کے چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کے لیے پرجوش طریقے سے پروان چڑھاتی ہے۔ سویلین سیاست دانوں کا ایک بڑا طبقہ مندرجہ بالا خوبیاں پیدا نہیں کر پاتا اور اس لیے وہ اخلاقی اور فکری سرمائے سے محروم ہیں، جو فوجی افسران میں ان کے لیے مطلوبہ احترام کی ترغیب دینے کے لیے ضروری ہیں۔79 پاکستان کی سویلین قیادت پر اپنی فکری اور اخلاقی برتری کی وجہ سے فوج کا غلبہ ہے۔80 سیاسی قیادت کی جانب سے نوجوان طبقے کے لیے آگے بڑھنے اور راستہ بنانے میں ناکامی کا نتیجہ سیاسی قیادت کے پست معیار کی صورت میں نکلتا ہے جو سول ملٹری عدم توازن کا باعث بنتا ہے۔81 عائشہ صدیقہ کے مطابق، “تمام سیاسی جماعتوں کی اعلیٰ سیاسی قیادت نے خوشی سے اپنی تنظیموں کو سرپرستی کے پلیٹ فارمز میں تبدیل کر دیا ہے، ایک طرف پاکستانی اسٹیبلشمنٹ سے وسائل کے لیے مذاکرات کیے جا رہے ہیں، اور دوسری طرف ملکی وسائل کی ازسرنو تقسیم کی حمایت کر رہے ہیں۔”82 اسٹین لینڈ کے مطابق، ایک بڑے خطرے کا ماحول، کمزور سیاسی ادارے، اور پاکستانی عوام کے ساتھ سیاسی اشرافیہ کی کم قانونی حیثیت کے نتیجے میں ماضی میں متواتر عسکری مداخلتیں ہوئیں۔83 سویلین قیادت کو دفاعی امور میں مہارت پیدا کرنے کی ضرورت ہے اور قومی سلامتی کی چند ورکشاپس کو چھوڑ کر، وہ بھی فوجی قیادت کے اصرار پر، قومی سلامتی اور دفاعی امور میں سویلین سیاست دانوں کی تربیت کا شاید ہی کوئی نظام ہو۔84  سول ملٹری عدم توازن کے باعث دفاعی امور پر کمزور سیاسی نگرانی جیسے انتظامی مسائل بھی پیدا ہوتے ہیں۔ ادارہ جاتی فیصلہ سازی کے ڈھانچے کی کمی اس کی وجوہات واضح کرتی ہے۔ سویلین قیادت کے پاس نگرانی کی اعلی ٰدرجے کی پارلیمانی کمیٹیاں ہیں۔ افسوس کہ ان کے پاس دفاعی اور سلامتی کے امور میں مؤثر مہارت نہیں ہے۔ کیبنٹ کمیٹی آف نیشنل سیکیورٹی کو اپنی موجودہ شکل میں زیادہ سویلین ممبران کے ساتھ ساتھ ایک مضبوط انتظامی و دفتری عملے کی ضرورت ہے۔ موجودہ قومی سلامتی ڈویژن کے پاس خالص فوجی معاملات میں مطلوبہ مہارت نہیں ہے اور اسے صلاحیتوں میں اضافے کی ضرورت ہے۔ فوج پر بامعنی سویلین نگرانی قائم کرنے میں وزارت دفاع کا بھی کوئی موثر کردار نہیں ہے۔ اسٹریٹجک پلاننگ ڈویژن، جس کے پاس جوہری منصوبہ بندی کی ذمہ داری ہے، کو بھی جوہری حکمت عملی کے سویلین ماہرین کی شکل میں ایک مضبوط سویلین نگرانی کے طریقہ کار کی ضرورت ہے، جو ترجیحاً وزیراعظم کے دفتر میں واقع ہو۔ قومی سلامتی کے مشیر (این ایس اے) کی تقرری کے لیے بھی جوہری حکمت عملی سمیت قومی سلامتی کے روایتی اور غیر روایتی پہلوؤں کے ماہرین کو شامل کرنے کے لیے مناسب وسائل کی ضرورت ہے۔85 وینزویلا اور ترکی کی مثالوں کو مدنظر رکھتے ہوئے، فوجی طاقت کو سیاسی طور پر الگ کرنے کی ضرورت ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ اس مقصد کو اس طریقے سے حاصل کیا جا سکتا ہے جس سے مسلح افواج کی پیشہ ورانہ کارکردگی میں اضافہ ہو سکے۔ ایک مضبوط جوائنٹ اسٹاف ہیڈ کوارٹر، جس کی سربراہی چیف آف ڈیفنس اسٹاف کرتا ہے، جو سہ فریقی خدمات پر موثر آپریشنل کنٹرول کا استعمال کرتا ہے، مذکورہ دونوں مقاصد حاصل کرسکتا ہے۔86

سفارشات

سول ملٹری تعلقات میں مثالی توازن کی راہ میں حائل اخلاقی، فکری اور ادارہ جاتی خامیاں، جن کی اوپر نشاندہی کی گئی ہے، انہیں ترجیحی طور پر دور کرنے کی ضرورت ہے۔ پاکستان کے لیے مثالی ماڈل ہنٹنگٹن کا سول ملٹری تعلقات کا پانچواں ماڈل ہو گا جس میں فوج کم سیاسی طاقت اور اعلیٰ پیشہ ورانہ مہار ت کی حامل ہو گی، اور فوج کا جھکاؤ عسکری معاملات کی طرف زیادہ ہو گا۔87 مندرجہ بالا ہدف حاصل کرنے کے لیے، پاکستان کو قومی سلامتی والی ریاست سے ایک ترقیاتی ریاست کی طرف منتقل ہونا پڑے گا۔ یہ مقصد جدت پسند سفارت کاری اور بہتر طرز حکمرانی کے ذریعے بیرونی اور اندرونی خطرات کو کم کرنے کے لیے ماحول تشکیل دے کر حاصل کیا جا سکتا ہے۔ مذکورہ بالا منتقلی سے ہی پاکستان حکومت، فوج اور عوام کے درمیان ربیکا شیف کی تجویز کردہ ہم آہنگی حاصل کر سکتا ہے۔ کم خطرات اور بہتر حکمرانی کے ساتھ سول ملٹری ہم آہنگی کے قیام میں عوام کی بہتری کو مدِنظر رکھتے ہوئے انسانی سلامتی اور ترقی پر اخراجات میں اضافے کے لیے گنجائش پیدا کی جا سکتی ہے۔ سویلین کنٹرول کی معروضی اور موضوعی صورتوں کے امتزاج کی ضرورت ہے بجائے اس کے کہ دونوں میں سے محض کسی ایک صورت کو اپنایا جائے۔اگرچہ فوج کو کافی پیشہ ورانہ خودمختاری دینے کی ضرورت ہے، لیکن اسے قومی پالیسی کی منصوبہ بندی کے چند پہلوؤں میں شامل کرنا بھی ضروری ہے، تاکہ سیاسی نظام میں فوج کے مفاد اور سویلین قیادت کے مابین ہم آہنگی پیدا کی جا سکے۔ ریاست کے عسکری اداروں اور فوجی افسران کو سویلین اداروں کی پیچیدگیوں اور چیلنجوں سے آگاہ کرنے کی ضرورت ہے۔ ایسا کرنے کا ایک طریقہ یہ ہے کہ افسران کو سویلین یونیورسٹیوں اور کالجوں میں مینجمنٹ، سوشل سائنسز اور اکانومی میں ڈگریاں حاصل کرنے کے لیے بھیجا جائے اور انہیں ڈیپوٹیشن پر سویلین محکموں میں خدمات انجام دینے کے مواقع فراہم کیے جائیں۔ اسی طرح سویلین کالجوں اور یونیورسٹیوں میں قومی سلامتی اور دفاع سے متعلقہ مضامین کی شمولیت کو یقینی بنایا جائے تاکہ بنیادی معلومات کی بنیاد رکھی جا سکے۔ نجی مطالعہ اور فوجی مضامین کے ساتھ منتخب امور کی براہِ راست آگاہی کے ذریعے اس میں مزید بہتری لائی جا سکتی ہے۔

سیاسی جماعتوں کو اپنی افرادی قوت اور جماعتوں کے اندر جمہوری طرزِ عمل کو بہتر بنانا چاہیے، جمہوری طریقوں پر عمل کرتے ہوئے حکمرانی کے مشکل کام کے لیے صحیح قیادت کا انتخاب کریں۔ فیصلہ سازی اور مشاورت کے لیے سیاسی عمل اور ڈھانچہ شفاف اور میرٹ پر مبنی ہونا چاہیے جس میں صحیح قائدانہ صلاحیتوں کو استعمال کرنے کے لیے لوگوں تک آسان رسائی ہو۔ سیاسی جماعتوں کی جانب سے ممکنہ قومی سلامتی مشیروں، وزرائے دفاع اور پارلیمانی کمیٹیوں کے سربراہوں کو اعتماد کے ساتھ مستقبل کی ذمہ داریاں نبھانے کے لیے تربیت دینے کے لیے ‘شیڈو کابینہ ‘کا ایک نظام قائم کیا جانا چاہیے۔

مسلح افواج کو اپنے معمول کے معاملات سے ہٹ کر غیر عسکری امور انجام نہیں دینے چاہئیں۔88  مسلح افواج کو معروضی کنٹرول کی بہترین روایت میں سِول شعبوں میں کوئی کردار ادا کرنے سے گریز کرنا چاہیے۔ بصورت دیگر فوج کی طرف سے متوازن سول ملٹری تعلقات کو نقصان پہنچانے کے لیے اپنی آئینی حدود سے متجاوز ہو کر کام کرنے کا رجحان پیدا ہو گا۔ جب بھی فوج کو سِول اداروں سے عوام کا تعلق کمزور ہوتا دکھائی دے، تو اسے سویلین اداروں کے لیے صحت مندانہ احترام پیدا کرنے اور سیاست میں مداخلت کرنے کے رجحان سے گریز کرنے کی ضرورت ہے۔89 مسلح افواج کو سول ملٹری تعلقات میں توازن کے حصول کے لیے سیاست میں ادارہ جاتی کردار پیدا کرنے کا رجحان، جیسا کہ انڈونیشیا اور ترکی کی مسلح افواج کے معاملے میں ہے، ترک کرنا چاہیے۔ ملٹری پروفیشنل ایجوکیشن، ملٹری اکیڈمی سے شروع ہو کر قومی سلامتی اور جنگی کورسز تک، اس طرح تیار کی جانی چاہیے کہ سویلین قیادت کی رضاکارانہ اطاعت کی عادت پیدا ہو۔

سویلین قیادت کو خاص طور پر قومی سلامتی کے معاملات میں اپنی طرف سے ذاتی اور غیر ادارہ جاتی فیصلہ سازی سے گریز کرنا چاہیے۔ سویلین قیادت کو ادارہ جاتی فیصلہ سازی کے لیے مضبوط نگرانی کے ڈھانچے اور اداروں سے فائدہ اٹھانا چاہیے۔ ایسے اداروں کی عدم موجودگی پالیسی میں ناپسندیدہ خلاء کا باعث بنتی ہے، جو کہ فوج کی طرف سے ناقابل تلافی کے طور پر پُر ہوتی ہے۔90

اخلاقی اور فکری خلیج کو کم کرنے کے بعد فیصلہ سازی کے ڈھانچے کے ساختی خامیوں کو بھی دور کیا جانا چاہیے۔ سینیٹ اور قومی اسمبلی کی پارلیمانی نگران کمیٹیوں میں اور سیاسی جماعتوں کو چاہیے کہ وہ دفاعی اور سلامتی کے امور کے ماہرین کو خاطر خواہ عملی تجربے کے ساتھ حاصل کریں، جو پارلیمنٹ میں منتخب ہوں، تاکہ حکومت کو نگرانی کی مضبوط صلاحیت فراہم کی جا سکے۔ کابینہ کمیٹی برائے قومی سلامتی میں کابینہ کے اہم وزراء اور سروسز چیفس کے ساتھ قومی سلامتی کے مشیر اور تعاون یافتہ ارکان، قومی سلامتی کے سول اور فوجی ماہرین پر مشتمل ہونا چاہیے۔ کمیٹی میں سویلین کی موجودگی کو بڑھایا جائے۔ قومی سلامتی کے مشیر کو براہ راست وزیراعظم کے ماتحت کام کرنا چاہیے اور اس کے پاس عسکری امور، معیشت، سفارت کاری، جوہری حکمت عملی اور غیر روایتی سلامتی کے موضوعات میں ماہرین کی ایک کونسل ہونی چاہیے۔ NSA کو وزیر اعظم کے لیے قومی سلامتی کے اختیارات میں شامل دفاع اور خارجہ پالیسی کے ان پٹ کے تال میل پر موثر کنٹرول کا استعمال کرنا چاہیے۔

وزارت دفاع کو مسلح افواج پر بامعنی پالیسی رہنمائی اور انتظامی نگرانی فراہم کرنے کے لیے مناسب وسائل فراہم کیے جائیں۔ سویلین بیوروکریسی کے ساتھ ساتھ مسلح افواج کے افسران میں سے دفاعی بیوروکریسی کا ایک مستقل کیڈر تیار کرنے کی ضرورت ہے۔ وزارتِ دفاع کی نگرانی ایک موثر وزیر دفاع کے ساتھ بامعنی ہونی چاہیے، جو تینوں افواج کی تنظیم، بجٹ، فوجی قوت کی تیاری، تحقیق، خریداری، تبادلے، ترقیاں، خطرے کی تشخیص اور ردعمل کے اختیارات کے بارے میں پالیسی رہنمائی فراہم کرے۔ ہائر ڈیفنس آرگنائزیشن (ایچ ڈی او) کو جوائنٹ سروسز ہیڈ کوارٹرز میں ایک متحد ٹرائی سروس کمانڈ بنا کر دوبارہ منظم کیا جانا چاہیے، جس کی سربراہی چیف آف دی ڈیفنس اسٹاف (سی ڈی ایس) کرے، جو وزیراعظم کے پرنسپل ملٹری ایڈوائزر کے طور پر کام کرنے کے علاوہ آپریشنل اختیار استعمال کرے جس میں تینوں افواج پر کنٹرول کے ساتھ ساتھ تینوں افواج کے سینئر افسران کی ترقیوں اور تعیناتیوں کے اختیارات بھی شامل ہوں۔ ایچ ڈی او کی تنظیم نو سے افسران کو کور کی طاقت کو الگ کر دیا جائے گا جیسا کہ وینزویلا کی فوج کے معاملے میں ہے۔ یہ آپریشنل ہم آہنگی اور معیشت کے حصول میں فوج پر بہتر سویلین کنٹرول کا باعث ہو گی۔

نتیجہ

پاکستان جیسے ممالک میں مسلح افواج کے جمہوری کنٹرول کے لیے سول ملٹری تعلقات میں صحت مند توازن ازبس ضروری ہے۔ مسلح افواج کے جمہوری کنٹرول کے لیے DCAF کے معیار کا تجزیہ اس حقیقت کو سامنے لاتا ہے کہ ریاست کے سول اور ملٹری ادارے مطلوبہ آئینی حدود کے تحت کام کر رہے ہیں۔ تاہم، سویلین کنٹرول کے تمام آٹھ DCAF اشاریوں کے جواب کے معیار میں بہتری کی ضرورت ہے۔ سول ملٹری تعلقات میں معیاری تبدیلی لانے کے لیے ریاست کے سویلین اور ملٹری دونوں حصوں کو اخلاقی، فکری اور ساختی سطح پر اقدامات کرنے ہوں گے، تاکہ ایسی صلاحیتیں پیدا کی جائیں جو سول ملٹری تعلقات میں صحت مند توازن کے لیے کردار ادا کریں۔ اس توازن کی تعریف پیٹر فیور نے بہترین انداز میں کی ہے، جو سمجھتا ہے کہ فوج کو اتنا مضبوط ہونا چاہیے کہ وہ ایسا کچھ بھی کر سکے جو سول قیادت اسے کرنے کے لیے کہتی ہے، جب کہ اس کے ماتحت ہوتے ہوئے اسے صرف وہی کچھ کرنا چاہیے جو سِول قیادت اسے کرنے کا اختیار دیتی ہے۔91  متعلقہ صلاحیتوں کی تشکیل اور مسلح افواج کے ساتھ ساتھ سویلین سیاسی قیادت کی کوتاہیوں کو دور کرنے کے لیے تجویز کیے گئے اقدامات سول ملٹری تعلقات میں ایک معیاری تبدیلی لانے کا وعدہ کرتے ہیں جس کے نتیجے میں ملک میں پیشہ ورانہ مہارت اور جمہوری استحکام میں بہتری آئے گی۔

(ترجمہ: عابد سیال)

References:

1 Samuel. P. Huntington, Political Order in Changing Societies (London: Yale University Press, 1973),1.

2 Ibid.,19.

3 Ibid.,19.

4 Paul Staniland, Explaining Civil-Military Relations in Complex Political Environments: India and Pakistan in Comparative Perspective, Security Studies, 17:322-362(Routledge, 2008), 340.

5 Regan, Patrick M., and Sam R. Bell, “Changing Lanes or Stuck in the Middle: Why Are Anocracies More Prone to Civil Wars?” Political Research Quarterly, vol. 63, no. 4, 2010, pp. 750. JSTOR, www.jstor.org/stable/25749246. Accessed 11 May 2021.

6 Feaver, Peter D, The Civil-Military Problematique: Huntington, Janowitz and the Question of Civilian Control, Armed Forces and Society (Vol 23, Iss.2):149-178, 149.

7 Harold Dwight Lasswell, Essays on the Garrison State ed. Jay Stanley (New Brunswick: Transaction Publishing, 1997), 24.

8 Suzanne C. Nielsen, Civil Military Relations, Theory and Military Effectiveness, Public Administration and Management, Volume X, Number 2(2005):74.

9 Paul Staniland, “Explaining Civil-Military Relations in Complex Political Environments: India and Pakistan in Comparative Perspective,” Security Studies, 17:322-362(Routledge, 2008), 328.

10       Patricia M Shields, Civil-Military Relations: Changing Frontiers, Public Administration   Review 66, no. 6 (2006): 926.

11Samuel P. Huntington, The Soldier and the State: The Theory and Practice of State-Society Relations (New York: Vintage Books, 1957), 82.

12     Amos Perlmutter, Political Roles and Military Rulers (New York: Routledge, 2019), 288.

13     Samuel P. Huntington, The Soldier and the State: The Theory and Practice of State-Society Relations (New York: Vintage Books, 1957), 83.

14     Morris Janowitz, The Professional Soldier: A Social and Political Portrait, 343.

15     Samuel P. Huntington, The Soldier and the State: The Theory and Practice of State-Society Relations (New York: Vintage Books, 1957), 84.

16     Jack Nelson-Pallmeyer, Brave New World Order: Must We Pledge Allegiance? (New York: Orbis Books, 1992), 35-36.

17     Thazha Varkey Paul, The Warrior State: Pakistan in the Contemporary World (New York: Oxford University Press, 2014), 72.

18     Harold Dwight Lasswell, Essays on the Garrison State ed. Jay Stanley (New Brunswick: Transaction Publishing, 1997), 59-60.

19     Huntington, The Soldier and the State: The Theory and Practice of StateSociety Relations, 96.

20     Ibid.,

21     Feaver, Armed Servants: Agency, Oversight, and Civil-military Relations, 300.

22     Rebecca L. Schiff, The Military and Domestic Politics: A Concordance Theory of Civil-Military Relations (New York: Routledge, 2009),82.

23     Ibid.,13.

24     Tan Tai Yong, The Garrison State: Military, Government and Society in Colonial Punjab, 1849-1947 (New Delhi: Sage Publications India, 2005), 23.

25     Ishtiaq Ahmed, Pakistan: The Garrison State – Origins, Evolution, Consequences (1947-2011) (Karachi: Oxford University Press Pakistan, 2013), 11.

26     Hasan Askari Rizvi, “The Military & Politics in Pakistan 1947-1997,” (Lahore: Sang-e-Meel Publications, 2011), 42.

27     Major General (R) Sher Ali Khan Pataudi, “The Story of Soldiering and Politics in India and Pakistan,” (Lahore: Wajidalis, 1978), 395.

28     Ayesha Jalal, “Democracy and Authoritarianism in South Asia: A Comparative and Historical Perspective,” (Lahore: Sang-e-Meel Publications, 1995), 43.

29     Ejaz Hussain, “Military Agency, Politics, and the State in Pakistan,” (New Delhi: Samskriti Publishers, 2013), 70.

30     Ayesha Jalal, Democracy and Authoritarianism in South Asia: A Comparative and Historical Perspective (Lahore: Sang-e-Meel Publications, 1995), 43.

31     Ahmed, Pakistan: The Garrison State – Origins, Evolution, Consequences (1947-2011), 8-9

32     Ibid.,

33     Mohammad Asghar Khan, My Political Struggle (Karachi: Oxford University Press, 2008), 3.

34     Shuja Nawaz, Crossed Swords: Pakistan, its Army, and the Wars Within (Karachi: Oxford University Press, 2008), 126.

35     Saeed Shafqat, Civil-Military Relations in Pakistan: From Zufikar Ali Bhutto To Benazir Bhutto (Lahore: Pak Book Corp, 1997), 9.

36     Qudrat Ullah Shahab, Shahabnama (Lahore: Sang-e-Meel Publications, 1990), 588.

37     Aitzaz Ahsan and Meghnad Desai, Divided by Democracy (New Delhi: Roli Books, 2005), 77.

38     Jalal, The State of Martial Rule: The Origins of Pakistan’s Political Economy of Defence, 182.

39     Rizvi, Military, State and Society in Pakistan, 80.

40     Kuldip Nayar, Distant Neighbours: A Tale of the Subcontinent (New Delhi: Vikas Publishing House, 1972), 170.

41     Shah, The Army and Democracy: Military Politics in Pakistan, 35-36.

42     Rizvi, The Military & Politics in Pakistan 1947-1997, 224.

43     S Akbar Zaidi, Military, Civil Society and Democratization in Pakistan (Lahore: Vanguard Books, 2011), 18.

44     Noel Israel Khokhar, “Civil-Military Relations in Pakistan: Musharraf’s Era (1999-2003)” (PhD Doctoral Dissertation, National Defence University 2016), 78.

45     Schiff, The Military and Domestic Politics: A Concordance Theory of CivilMilitary Relations,87.

46     DCAF Backgrounder. DCAF is a centre for security development and the rule of law set up as an initiative of Swiss confederation. The center contributes to security sector reforms. Democratic Control of Armed Forces, Geneva Centre for the Democratic Control of Armed Forces (2008), 12.

https://www.files.ethz.ch/isn/55845/17_bg_dem_control_armed_forces.pdf.

47     Lieutenant General (R) Naeem Khalid Lodhi (Former Defence Minister and Secretary), interview by Author, July 4, 2019

48     DCAF Backgrounder. DCAF is a centre for security development and the rule of law set up as an initiative of Swiss confederation. The center contributes to security sector reforms. Democratic Control of Armed Forces, Geneva Centre for the Democratic Control of Armed Forces (2008), 12.

https://www.files.ethz.ch/isn/55845/17_bg_dem_control_armed_forces.pdf.

49     Major General (R) Athar Abbas (Former DG ISPR), interview by Author, March 13, 2020.

50     Lieutenant General (R) Asif Yasin (Former Defence Secretary), interview by Author, March 11, 2020.

51     DCAF Backgrounder. DCAF is a centre for security development and the rule of law set up as an initiative of Swiss confederation. The center contributes to security sector reforms. Democratic Control of Armed Forces, Geneva Centre for the Democratic Control of Armed Forces (2008), 12.

https://www.files.ethz.ch/isn/55845/17_bg_dem_control_armed_forces.pdf.

52     General (R) Ehsan ul Haq (Former Chairman Joint Chiefs of Staff Committee), interview by Author, October 5, 2019.

53     S. M. Zafar, History of Pakistan Reinterpreted (Lahore: Manzoor Law Book House 2019), 635.

54     Taha Siddiqi, “Poor Nation Rich Army”, Foreign Policy, Mar 21,2019,

https://foreignpolicy.com/author/taha-siddiqui/

55 Ayesha Siddiqa, Military Inc. Inside Pakistan’s Military Economy (London: Pluto Press, 2017), 75-76.

56     Branch Kimmerling, “Political Subcultures and Civilian Militarism in a SettlerImmigrant Society,” in Command with Security: Learning from Israel’s Experience, ed, Daniel Bar-Tal Dan Jacobson, and Klierman (Greenwich, Conn: JAI Press, 1998),395-416.

57     Charles D Freilich, “National Security Decision-Making in Israel: Processes, Pathologies, and Strengths,” The Middle East Journal 60, no. 4 (2006):659.

58     Amos Perlmutter, Military and Politics in Israel (London: Frank Cass & CO. LTD.,1969), 123.

59     Freilich, “National Security Decision-Making in Israel: Processes, Pathologies, and Strengths,” 663.

60     Jeb Sprague, “Top Bolivian coup plotters trained by US military’s School of the Americas, served as attachés in FBI police programs,” The Grayzone (November 13 2019). https://thegrayzone.com/2019/11/13/bolivian-coupplotters-school-of-the-americas-fbi-police-programs/.

61     Harold A Trinkunas, “The Crisis in Venezuelan Civil-Military Relations: From Punto Fijo to the Fifth Republic,” Latin American Research Review 37, no. 1 (2002): 43.

62     Ozan O. Varol, “The Turkish “Model” of Civil–Military Relations,” International Journal of Constitutional Law 11, no. 3 (2013): 730.

63     Varol, “The Turkish ‘Model’ of Civil–Military Relations,” 732.

64     Ibid., 746

65     Iain Henry, “Civil-Military Relations in Post-Suharto Indonesia and the Implications for Democracy Today: A Preliminary Analysis,” Australian Army Journal 2, no. 2 (2004): 150.

66     Edmund McWiliams, “Democracy in Indonesia: A Progress Report,” The Foreign Service Journal, no. May (2018): 4. ,8, https://www.afsa.org/democracy-indonesia-progress-report.

67     Paul Staniland, “Explaining Civil-Military Relations in Complex Political Environments: India and Pakistan in Comparative Perspective,” Security Studies 17, no. 2 (2008): 328.

68     Dr. Rifaat Hussain, interview by Author, March 17, 2020.

69     Mazhar Aziz, Military Control in Pakistan: The Parallel State (London: Routledge, 2008), 98.

70     Ejaz Haider, “Our Terrible Binary,” The Express Tribune, January 11, 2012.

71     Michael C Desch, Civilian Control of the Military: The Changing Security Environment (Baltimore: John Hopkins University Press, 1999), 1-2.

72     Kamal Davar, “Tryst with Perfidy: The Deep State of Pakistan,” (New Delhi: Rupa Publications, 2017), VIII.

73     Harold Dwight Lasswell, Essays on the Garrison State ed. Jay Stanley (New Brunswick: Transaction Publishing, 1997), 24.

74     Shuja Nawaz, interview by Author, June 10, 2019.

75     Hasan Askari Rizvi, “Civil-Military Relations,” The Express Tribune, October 17, 2016.

76     Hasan Askari Rizvi, interview by Author, October 2, 2019.

77     Gavin Kennedy, The Military in the Third World (London: Charles Scribner, 1974), 25.

78     Perlmutter, “The Praetorian State and the Praetorian Army: Toward a Taxonomy of Civil-Military Relations in Developing Polities,” 388.

79     General (R) Ehsan ul Haq (Former Chairman Joint Chiefs of Staff Committee), interview.

80     Ayaz Amir, “The Debt We Owe the Army and PAF,” The News, November 18, 2014, https://www.thenews.com.pk/print/88611-the-debt-we-owe-the-armyand-paf.

81     Adnan Rehmat, “Nowhere else do you have politicians clinging to top positions for decades like they do here: Ayaz Amir,” Herald, December 4, 2017,

http://herald.dawn.com/news/1153925.

82     Ayesha Siddiqa, “Pakistan’s long-ailing democracy is now completely dead, thanks to its political parties,” The Print (January 28 2020).

https://theprint.in/opinion/pakistans-long-ailing-democracy-is-now-completelydead-thanks-to-its-political-parties/355257/.

83     Staniland, “Explaining Civil-Military Relations in Complex Political Environments: India and Pakistan in Comparative Perspective,” 323.

84     Lieutenant General (R) Javed Hasan (Former Commander FCNA), interview by Author, December 19, 2019.

85     Lieutenant General (R) Naeem Khalid Lodhi (Former Defence Minister and Secretary), interview.

86     General (R) Ehsan ul Haq (Former Chairman Joint Chiefs of Staff Committee), interview.

87     Huntington, The Soldier and the State: The Theory and Practice of StateSociety Relations, 96.

88     Hasan Askari Rizvi, Military, State and Society in Pakistan (Lahore: Sang-eMeel Publications, 2003), 22.

89     Samuel Finer, The Man on Horseback: The Role of the Military in Politics (London and Dunmow: Pall Mall Press, 1962), 21.

90     Shireen M. Mazari, “Autocratic Rulers,” The News, March 30 2017, https://www.thenews.com.pk/print/195322-Autocratic-rulers.

91     Feaver, “The Civil-Military Problematique: Huntington, Janowitz and the Question of Civilian Control,” 149.

یہ آرٹیکلز بھی پڑھیں مصنف کے دیگر مضامین

فیس بک پر تبصرے

Loading...