2021 کا فزکس کا نوبل پرائز

140

رواں برس کا نوبل انعام برائے فزکس جاپان میں پیدا ہونے والے 90 سالہ سویوکورو مانابے اور جرمنی کے 89 سالہ کلاؤس ہاسل مان کو کلائمیٹ ماڈلز پر تحقیق کے لیے مشترکہ طور پر نوبل پرائز کے آدھے حصے کے حقدار قرار پائے ہیں۔ باقی آدھا حصہ اٹلی کے جارجیو پاریسی کو دینے اعلان کیا گیا ہے۔

پروفیسر منابے نیو جرسی امریکہ کی پرنسٹن یونیورسٹی سے وابستہ ہیں جبکہ ہاسل مین ہیمبرگ جرمنی کے میکس پلانک انسٹی ٹیوٹ برائے موسمیات میں پروفیسر ہیں۔

نوبل انعام جیوری نے آب و ہوا کی تبدیلی کے ماڈلنگ کی اہمیت کو تسلیم کیا جس نے انسانی عوامل کے موسمیاتی تبدیلیوں اور زمین پر اس کے طویل مدتی اثرات کو ثابت کیا۔ آج بھی دنیا کے کئی رہنما، معیشت دان اور کاروباری افراد موسمیاتی تبدیلی کو نہیں مانتے، یہ ان سب کے لئے ایک واضح پیغام ہے کہ “آب و ہوا کی ماڈلنگ فزیکل تھیوری اور ٹھوس طبیعیات پر پورا اترتی ہے اور گلوبل وارمنگ ٹھوس سائنس پر قائم ہے۔”

اس انعام کا اعلان کرنے والی جیوری کے مطابق ان ماہرین کو یہ انعام “ماحولیات کے ماڈلز اور فزیکل سسٹمز کی تشریح و تفہیم کے لیے ان کی خدمات کے اعتراف میں دینے کا فیصلہ کیا گیا۔ ان دو محققین نے زمین کی آب و ہوا کا ایک اہم ریاضیاتی ماڈل بنایا اور پیش گوئی کی کہ زمین کے ماحول میں کاربن ڈائی آکسائیڈ کی بڑھتی ہوئی سطح عالمی درجہ حرارت کو بڑھا دے گی۔ ان کی تحقیق زمینی آب و ہوا سے متعلق چند بنیادی معلومات اور اس پر اثر انداز ہونے والے انسانی عوامل سے متعلق ہے۔ ”

نوبل انعام چاہے وہ سائنس، ادب یا امن کا ہو، اپنی اہمیت کی وجہ سے دنیا بھر میں اس مقصد کو آگے بڑھانے میں مدد کرتا ہے.

آب و ہوا کے ماڈل اور ان کی اہمیت

منابے، نے 1960 کی دہائی میں دکھایا کہ کس طرح زمین کے ماحول میں کاربن ڈائی آکسائیڈ کی بڑھتی ہوئی مقدار سطح زمین پر درجہ حرارت میں اضافے کا باعث بنتی ہے، اور انہوں نے زمیں کی آب و ہوا کے ابتدائی ریاضیاتی ماڈل تیار کیے۔ تقریبا ایک دہائی کے بعد، ہاسل مین نے جرمنی کے شہر ہیمبرگ کے میکس پلانک انسٹی ٹیوٹ برائے موسمیات میں، موسم اور آب و ہوا کو جوڑنے کے لیے ایک ماڈل بنانے کے لیے اس کام کی بنیاد رکھی۔

89 سالہ ہاسل مین نے انسانی ساختہ آب و ہوا کی تبدیلی اور گرین ہاؤس اثر پر ابتدائی تحقیق کی اور ارتھ سسٹم سائنس کے بانیوں میں سے ہیں. 1975 ہاسل مین سے نومبر 1999 تک ہیمبرگ میں میکس پلانک انسٹی ٹیوٹ برائے موسمیات میں ڈائریکٹر اور 1988 سے 1999 تک جرمن کلائمیٹ کمپیوٹنگ سینٹر میں سائنسی ڈائریکٹر رہے۔

ہاسل مین نے 1970 کی دہائی میں زمین کی آب و ہوا کے لیے پہلا ‘تصوراتی ماڈل’ تعارف کرایا، جو موسم اور آب و ہوا کو جوڑتا ہے، یہ ظاہر کرتا ہے کہ بارش جیسے مختصر مدتی مظاہر کا تعلق سمندر کے دھاروں جیسی طویل المیعاد پیش رفت سے ہے۔ اس سے یہ وضاحت کرنے میں مدد ملی کہ موسمی ماڈل مختصر مدت کے موسم کے اتار چڑھاؤ کے باوجود قابل اعتماد پیش گوئیاں کر سکتے ہیں۔

ہاسل مین نے مخصوص سگنلز کی شناخت کے لیے ایسے طریقے بھی تیار کیے جو کہ آب و ہوا میں قدرتی مظاہر اور انسانی سرگرمیوں کے نقوش ہیں، یہ ظاہر کرتے ہوئے کہ ماحولیاتی درجہ حرارت میں اضافہ انسانی کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج سے منسلک کیا جا سکتا ہے۔ ہاسل مین کے ماڈل یہ ثابت کرنے کے لیے استعمال کیے گئے ہیں کہ فضا میں بڑھتا ہوا درجہ حرارت کاربن ڈائی آکسائیڈ کے انسانی اخراج کی وجہ سے ہے۔

انہوں نے 1988 کے ایک انٹرویو میں کہا “30 سے 100 سالوں میں، اس پر منحصر ہے کہ ہم کتنا فوسل ایندھن استعمال کرتے ہیں، ہمیں موسمیاتی تبدیلیوں کا سامنا کرنا پڑے گا۔ آب و ہوا کے زون بدل جائیں گے، بارش مختلف طریقے سے تقسیم ہوگی۔ پھر ہم بے ترتیب نتائج کے بارے میں مزید بات نہیں کر سکیں گے۔ ہمیں یہ سمجھنا چاہیے کہ ہم ایسی صورتحال میں داخل ہو رہے ہیں جہاں سے پیچھے مڑنا ممکن نہیں ہے۔”

آج ان کی یہ پیشن گوئی ہماری آنکھوں کے سامنے من او عن پوری ہو رہی ہے.

میکس پلانک انسٹی ٹیوٹ برائے موسمیات کے موسمیاتی سائنسدان بجن سٹیونز کا کہنا ہے کہ “منابے نے ہمیں دکھایا کہ کس طرح اور کیوں بڑھتا ہوا CO2 گلوبل وارمنگ کا باعث بنتا ہے اور ہاسل مین نے دکھایا کہ یہ ہو رہا ہے “. انہوں نے مزید کہا کہ انسٹی ٹیوٹ “بہت خوش” ہے کہ اس جوڑے کو “سائنس کے لیے پہلا نوبل انعام دیا گیا ہے جو کہ موسمیاتی تبدیلی کے بارے میں ہماری تفہیم پر مبنی ہے”۔

پرنسٹن یونیورسٹی کے موسمیاتی ماہر سیوکورو “سوکی” منابے، جاپانی نژاد سائنسدان ہیں، جو 1968 سے پرنسٹن یونیورسٹی کی فیکلٹی اور 1975 سے امریکی شہری ہیں۔ جاپان میں 1931 میں پیدا ہوئے والے، منابے نے ٹوکیو یونیورسٹی سے 1953 میں اپنی بیچلر کی ڈگری اور 1958 میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی۔ فارغ التحصیل ہونے کے بعد، انہوں نے نیشنل ویدر سروس میں کام کرنے کے لیے امریکا ہجرت کی۔ 1963 میں، منابے واشنگٹن، ڈی سی سے پرنسٹن منتقل ہوئے اور جیو فزیکل فلوئڈ ڈائنامکس لیبارٹری (جی ایف ڈی ایل) کے شریک بانی بنے۔

جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا ان کے پاس 26 ویں اقوام متحدہ کی موسمیاتی تبدیلی کانفرنس میں چند ہفتوں میں جمع ہونے والے عالمی رہنماؤں کے لیے کوئی پیغام ہے تو انہوں نے “کہا کہ آب و ہوا کی پالیسی بنانا موسمیاتی پیشن گوئی کرنے سے ہزار گنا زیادہ مشکل ہے”۔

انہوں نے تفصیل سے کہا: “آب و ہوا [پالیسی] میں نہ صرف ماحول بلکہ توانائی، زراعت، پانی اور ہر وہ چیز شامل ہے جس کا آپ تصور بھی کر سکتے ہیں۔ جب معاشرے کے یہ بڑے مسائل سب ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہوں تو آپ سمجھ سکتے ہیں کہ اس چیز کو حل کرنا کتنا مشکل ہے”۔

پرنسٹن میں سول، ماحولیاتی انجینئرنگ اور عوامی اور بین الاقوامی امور کے پروفیسر ڈینس ماؤزرل نے کہا، “سوکی منابے موسمیاتی سائنس کے میدان میں ایک ستون ہے۔” “منابے کی بنیاد پر بنائے گئے آب و ہوا کے ماڈل آج پیش گوئی کرنے اور تجزیہ کرنے کے لیے اہم ٹولز ہیں کہ گرین ہاؤس گیسوں کے اخراج کے نتیجے میں دنیا کیسے بدل جائے گی، اور زمین پر زندگی کے لیے تیزی سے گرین ہاؤس گیسوں کے اخراج کو کم کرنے کے بے پناہ فوائد کی مقدار معلوم کرنے کے لیے بھی کارآمد ہیں۔”

اس سال اگست کے مہینے میں جاری ہونے والی موسمیاتی تبدیلی پر اقوام متحدہ کے ماحولیاتی تبدیلی کے بین الاقوامی پینل (آئی پی سی سی) کی چھٹی آب و ہوا کی تشخیص کی رپورٹ جس میں اس بات پر زور دیا کہ انسان موسمیاتی تبدیلی کا سبب بن رہے ہیں، اور “موسمیاتی تبدیلی مستقبل کا مسئلہ نہیں ہے، یہ یہاں اور ابھی ہے اور دنیا کے ہر خطے کو متاثر کر رہا ہے”۔ یہ اور دوسری رپورٹس انہی آب و ہوا کے ماڈل کو بنیاد بنا کر اپنے نتیجہ پیش کرتی ہیں.

یہ نوبل انعام گلاسگو میں ہونے والی اقوام متحدہ کی 26 ویں موسمیاتی تبدیلی کانفرنس سے چند ہفتے پہلے دیا گیا۔ جو نوبل انعام کمیٹی کا عالمی رہنماؤں کو واضح پیغام ہے.

یہ آرٹیکلز بھی پڑھیں مصنف کے دیگر مضامین

فیس بک پر تبصرے

Loading...