” جناور جگت”: شاہد شبیر کے قلم کا ایک اور کرشمہ

576
” اینیمل فارم” سیاسی جھانسوں کے مضمرات، نیتاؤں کی شعبدہ بازیوں، پرجا کی نادانیوں، مطلق العنانیت اور اس کے جوازی پروپیگنڈے کے عذابوں،  رعیت کی ٹوٹتی امیدوں اور بکھرتے خوابوں کو پُرفریب سادگی سے بیان کرتا جارج آرویل کا ایک ایسا ناول ہے جو اپنی تصنیف کے چھہتر سال بعد بھی relevant ہے۔ اور تب تک رہے گا، جب تک عوامی شعور  استعماری قوتوں کا غرور خاک میں نہیں ملا دیتا۔
شاہد شبیر نے عالمی ادب کے اس شہ پارے کا ” جناور جگت” کے نام سے پنجابی زبان میں ترجمہ کیا ہے۔ فاضل مترجم اس سے پیشتر سیموئل بیکٹ کے شہرہ آفاق ڈرامے ” ویٹنگ فار گوڈو” کو بھی نویکلا پنجابی روپ دے چکا ہے۔
ایسے وقت میں، جب کہ وطنِ عزیز ایک مرتبہ پھر مختلف النوع بحرانوں کا شکار ہے اور اسے درپیش مسائل کے  “حل” کے لیے مکرر نِت نئے ماڈل زیرِ بحث ہیں؛ فاضل مترجم کا اس ناول کو ترجمے کے لیے منتخب کرنا اس کے سیاسی شعور اور اپنے خطے کے معروضی حالات سے آگاہی پر دال ہے۔ فاضل مترجم جانتا ہے کہ جبر کے اندھیروں میں جب مزاحمتی تخلیق کے چراغ جلنا بند ہو جائیں تو ایسی تحریروں کے ترجموں کے جگنو راہ نما بن جاتے ہیں۔
اس ناول کے کردار مختلف جان ور ہیں جو اپنے آقا مسٹر جونز کے ملکیتی، مینور نامی فارم میں رہتے ہیں۔ یہ اپنے مالک کو فارم سے  بے دخل کر کے اپنی حکومت قائم کرتے ہیں۔ برابری کی بنیاد پر بنائی گئی اس حکومت کا حشر بھی کچھ اچھا نہیں ہوتا  اور وہاں بھی اشراف کی صورت میں خنزیروں کا طبقہ ابھرتا ہے جو دوسرے جان وروں کے ساتھ انسانوں سے بھی زیادہ برا سلوک کرتا دکھائی دیتا ہے۔ جان ور اپنی آزادی کھو بیٹھتے ہیں اور اس جبر و استبداد کو للکارنے سے بھی قاصر ہوتے ہیں کیوں کہ نئے حاکموں کے پاس خونخوار کتوں کا شیطانی اور انتہائی طاقت ور لشکر موجود ہے۔ آہستہ آہستہ تبدیلی اور انقلاب اپنے معنی کھو بیٹھتے ہیں اور جان وروں کی زندگی پہلے سے بھی بدتر ہو جاتی ہے۔
کہنہ مشق مترجم، ترجمے کی لسانی تشکیل ہمیشہ اپنی قوم، زبان، زمین اور زمانے کے مخصوص محاوروں کی مدد سے کرتا ہے۔ کیوں کہ کسی تصنیف کی خصوصیات کے اظہار اور ادائے مطلب کے لیے اس کے محاورں کا اپنی زبان میں اس طرح ترجمہ کرنا کہ طرزِ بیان غریب و  نامانوس بھی نہ ہو؛ فقط اسی طور ہی سے ممکن ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ آزمودہ کار مترجم یہ التزام بھی کرتا ہے کہ عبارت شستہ اور سلیس ہو اور اس میں کسی قسم کا اغلاق و تعقید اور تضع و اضطراب نہ آنے پائے اور ترجمہ اصل متن کا آئینہ دار بھی ہو۔  تخلیقی فعالیت سے مملو، دیسی اور بدیسی زبان اور تہذیب میں رشتہء ارتباط قائم کرتے ” اینیمل فارم” کے اس ترجمے میں شاہد شبیر نے محولہ بالا ضروریاتِ فن کا پورا خیال رکھا ہے۔
شاہد شبیر نے اس ترجمے میں کرداروں اور مقامات کے ناموں کے حوالے سے  adaptation کی تکنیک استعمال کی ہے۔ اس نے فقط متن ہی کا پنجابی ترجمہ نہیں کیا بل کہ اس میں مذکور مقامات اور کرداروں کے نام بھی پنجاب کے رنگ میں رنگ دیئے ہیں۔ پنجاب کی دھرتی پر اترتے ہی Manor farm, مدن جگیر، Mr. Jones, جیون، old Mayor, بابا بدھا، Boxer, بہادر، Clover, دھنو، Banjamin, لبان،  Squealer, چنگھاڑو، Mollie, لاڈو، Napolian, ناشی اور Snowball, پنبا بن گئے ہیں۔ جب کہ انگلستان، انوپستان اور آئرلینڈ، اوپستان سے موسوم ہوئے ہیں۔ فاضل مترجم نے اپنی ان تھک محنت سے، ماحول کو سازگار بنانے  کے بعد،  بڑی محبت اور عقیدت سے جارج آرویل کو اپنے عہد،  علاقے اور لوگوں سے ہم کلام ہونے کی دعوت دی ہے۔
اعلی تخلیقی متن کا ترجمہ ایک کٹھن کام ہے۔ اس عمل میں مترجم کا واسطہ ایک ایسے متن سے پڑتا ہے جو اپنی زبان میں ایک مثالی حیثیت کا حامل ہوتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ادبِ عالیہ کے ترجمے کی عمدگی کا انحصار مترجم کی مہارت کے ساتھ ساتھ ہدفی زبان کی تجریدی صلاحیت پر بھی ہوتا ہے کہ اس میں تخلیق کی جمالیات و معنی کی ترسیل کے لیے مسلمہ و مجوزہ اصطلاحات کا کتنا بڑا ذخیرہ موجود ہے۔ دورانِ ترجمہ فاضل مترجم یقیناً پنجابی زبان کی تجریدی صلاحیت سے مستفید ہوا ہے تاہم اس نے فقط اسی پر اکتفا نہیں کیا بل کہ اپنے اسلوب اور جدید اصطلاحات سازی سے پنجابی زبان کو اور بھی ثروت مند کر دیا ہے. ناول کے مندرجہ زیل اقتباسات اور ان کا پنجابی ترجمہ ملاحظہ کریں:
” The pigs had set aside the harnes -room as a headquarters for themselves. Here, in the evenings, they studied blacksmithing carpentering and other necessary arts from books which they had brought out of the farmhouse. Snowball also busied himself with organising the other animals into what he called Animal Committees. He was indefatigable at this. He formed the Egg Production Committee for the hens, the Clean Tales League for the cows, the Wild Comrades’ Re-education committee (the object of this was to tame the rats and rabbits), the Whiter Wool Movement for the sheep, and various others, besides instituting classes in reading and writing. On the whole these projects were a failure. The attempt to tame the wild creatures, for instance, broke down almost immediately. The continued to behave very much as before, and when treated with generosity simply took advantage of it.
” سوراں نے ساز خانے نوں اپنا پردھان کیندر بنایا۔ ایتھے اوہ شاماں نوں لوہارا ترکھانا تے دوجے لوڑی دے ہنر سکھدے، اوہناں کتاباں چوں جیہڑیاں اوہ کھلیان بھون چوں لبھ کے لیائے سن۔ پنبا دوجے پشواں نوں، جیہناں نوں اوہ ” جنتو سبھاواں” کہندا سی، اوہناں اندر منظم کرن چ جُٹ گیا۔ ایس کم چ اوہ انتھک سی۔ اوہنے ” آنڈے پیداوار سبھا” ککڑیاں لئی قیم کیتی، ” اُجل پوچھ سبھا” گانواں لئی، ” جانگلی مِتر مڑ پڑھائی منڈل” ( جہدا مدعا چوہیاں تے خرگوشاں نوں سدھانا سی)، ” چٹیری پشم جماعت” بھیڈاں لئی، اتے لکھائی پڑھائی دیاں کلاساں تو اڈ کئی ہور وی۔ اے منصوبے مجموعی طور تے بیکار ای گئے۔ جیویں جانگلی جنتو پڑھان دا جتن ایدھر شروع ہویا تے اودھر ختم۔ اوہناں دے لچھن اوہیو رہے جو پہلے سن، جدوں وی کھلیاں بانہواں نال سواگت ہویا اوہناں ات ای چُکی۔” ( صفحہ نمبر 36 کی آخری سطر بقیہ صفحہ نمبر 37 )
” Napoleon was now never spoken of simply as ” Napoleon”. He was always referred to in formula style as ‘ Our Leader, Comrade Napoleon’ and pigs liked to invent for him such titles as ‘ Father of All Animals’ Terror of Mankind, Protector of the Sheepfold, Ducklings’ Friend, the like. In his speeches Squealer would talk with the tears rolling down his cheeks of Napoleon’s wisdom, the goodness of his heart, and the deep love he bore to all animals everywhere, even and especially the unhappy animals who still lived in ignorance and slavery on other farms. It had become usual to give Napoleon the credit for every successful achievement and every stroke of good fortune. You would often hear one hen remark to another, ‘ Under the guidance of our Leader, Comrade Napoleon, I have laid five eggs in six days’; or two cows,enjoying a drink at the pool, would exclaim, ‘ Thanks to the leadership of Comrade Napoleon, how excellent this water tastes!’
” ناشی نوں ہن نِرا ناشی نئیں سن آہندے۔ اوہنوں آکارک ڈھنگ نال ہمیشہ ایسراں بلاندے ” ساڈا نیتا متر ناشی” تے سوراں نوں اوہدے لئی ایفو جیہے خطاب گھڑن دا چس پے گیا جیویں ” جنتو جگت دا باپو”، ” پرش ہول”, ” بھیڈ واڑ دا راکھا”, ” بتک بال دا بیلی” تے ایہو جیہے کئی ہور۔ چنگھاڑو اپنیاں تقریراں اچ گلھاں توں ڈلدے ہنجواں نال، ناشی دی بُدھی اتے اوہدے من دی مِٹھ دا جاپ کردا، نالے اوس ڈوہنگی حُب دا جیہڑی ناشی دے اندر ہر پشو لئی ٹھاٹھاں مار دی سی بھانویں اوہ جتھوں دا وی ہووے، خاص کر اوہناں دکھی پشواں لئی جیہڑے ہجے وی دوجیاں جگیران اچ بے علمی تے غلامی دا جیون پئے جیوندے سن۔ ہر سپھل پراپتی تے بھاگوانی دا سہرا ناشی دے سر بنھن دی رسم ای ہے گئی۔ اکثر اک ککڑی دوجی نوں ایہہ کہندیاں سنیندی ” ساڈے نیتا متر ناشی دی رہبری ہیٹھ میں چھ دناں چ پنج آنڈے دتے نیں؛” یا دو گانواں ہودے تے پانی پیندیاں رولا پانا، ” دھن اے متر ناشی، اوہ ساڈا نیتا اے تاں ای تے پانی ایڈا سوادلا اے۔” ( صفحہ نمبر 83, 84)
فاضل ترجمہ نگار نے  متن کی عبارت کو محض ایک زبان سے دوسری زبان میں منتقل نہیں کیا بل کہ اس کے معنی، مرکزی خیال اور مجموعی تاثر کو اس تخلیقی فن کاری سے  پنجابی زبان میں ڈھالا ہے کہ قاری متن کے تاثرات اور اس کے ثقافتی و تہذیبی سیاق و سباق سے محظوظ ہو سکتا ہے۔ ” جناور جگت”  میں اصل متن کی معنوی اور ظاہری صورت اور وحدتِ تاثرکو برقرار رکھنے سے قارئین تک جارج آرویل کی اس لافانی تخلیق کی ترسیل کے امکانات بہت بڑھ گئے ہیں۔
شاہد شبیر نے اس ترجمے میں انگریزی لفظ کی جگہ پنجابی لفظ رکھ کر، کوئی میکانکی عمل سر انجام نہیں دیا؛ ایک تخلیقی تجربے کی تہذیبی معنویت کو دوسری تہذیبی معنویت میں اس عمدگی سے ڈھالا ہے کہ یہ ایک دوسرے کے سیاق میں قطعاً مہمل یا بے معنی نہیں رہیں۔ ” اینیمل فارم” کے پنجابی ترجمے میں فاضل مترجم نے اس ناول کی فنی نزاکتوں اور باریکیوں کا مکمل دھیان رکھا ہے۔ اور متن کی حرمت برقرار رکھتے ہوئے ایک ایسا رواں اور چست ترجمہ کیا ہے جس نے ایک نئے اسلوبِ بیان سے پنجابی زبان کا دامن مزید وسیع کر دیا  ہے۔ ناول کا یہ اقتباس اور اس کا پنجابی ترجمہ دیکھیے:
“Banjamin was the older animal on the farm, and the worst tempered. He seldom talked, and when he did it was usually to make  some cynical remark-he would say that God had given him a tail to keep the flies off, but that he would sooner have had no tail and no flies. Alone among the animals on the farm he never laughed. If asked why, he would say that he saw nothing to laugh at.
” لبان سی مدن جگیر دا سبھ توں وڈھیرا تے وڈھوان واسی۔ اوہ کدی کدار ای بولدا، پر جدوں وی منہ کھولدا کوئی پُٹھی گل ای کردا۔ جیویں اوس آکھنا پئی رب نے اوہنوں پوچھ مکھیاں اڈان لئی دتی سی پر اوہ دن دور نئیں جدوں نہ تے پوچھ رہنی اے تے نہ ای مکھیاں۔ سارے پشواں چہ اوہ کلّا جی سی جیہڑا کدی نئیں سی ہسیا۔ جے پچھو کیوں تے کہنا اوہنوں کوئی شے اجیہی دِسدی ای نئیں جہدے تے ہسے۔” ( صفحہ نمبر 12 کی آخری اور صفحہ نمبر 13 کی ابتدائی سطور)
شاہد شبیر نے ” جناور جگت” میں جارج آرویل کی ترجمانی کے ساتھ ساتھ اپنی تصنیفی صلاحیتوں کو بھی آشکار کیا ہے۔ اس نے یہ ترجمہ اس لگن، محبت اور لگاوٹ کے ساتھ کیا ہے کہ یہ تخلیق کی باز آفرینی معلوم ہوتا ہے۔ یہ فاضل مترجم کی تصنیفی اہلیت ہی کا اعجاز ہے کہ اس نے تخلیق کار کے اسلوب کے ساتھ ساتھ پنجابی زبان کی نزاکت اور مزاج کو بھی قائم رکھا ہے:
” As winter drew on Mollie became more and more troublesome. She was late for work every morning and excused herself by saying that she had overslept, and she complained of mysterious pains, although her appetite was excellent. On every kind of pretext she would run away from work and go to the drinking pool, where she would stand foolishly gazing at her own reflections in the water.”
” ایدھر پالا ودھدا گیا تے اودھر لاڈو دا ستاوا۔ اوہ روز کم تے دیریں آندی تے عذر دیندی؛ پئی اکھ ای نئیں کھلی، گپت روگاں دا رونا روندی، حالانکہ بھکھ اوہنوں ٹکا کے لگدی سی۔ آنے بہانے کم توں نٹھدی تے ہودی اُتے جا کے لَلیاں وانگو اک ٹک پانی چ اپنی چھایا نوں گھوردی رہندی۔” ( صفحہ نمبر 48)
شاہد شبیر نے ” اینیمل فارم” کو جس طرح ” جناور جگت” میں ڈھالا ہے یہ امر اس حقیقت کا گواہ ہے کہ وہ دیسی اور بدیسی تہذیب اور ثقافتی اقدار اور روایات سے بخوبی واقف ہے۔
شاہد شبیر کی زبان اپنی روانی اور سلاست کی وجہ سے ایک منفرد شانِ دل ربائی رکھتی ہے لیکن وہ اپنی فصاحت پر تخلیق کی روح، اس کے اہنگ اور تیور کو قربان نہیں کرتا۔ اس کے ترجموں میں مصنف کے لہجے کی کھنک بھی ہوتی ہے اور اپنی زبان کے مزاج کی دھنک بھی۔ وہ متن کا وفادار بھی ہے اور اپنی مادری زبان کے طور طریقوں کا تابع دار بھی۔ “جناور جگت” میں فاضل مترجم نے انگریزی لفظوں کے معنی و مفہوم کو اس فن کارانہ کاری گری سے متعین کیا ہے کہ کوئی جملہ بے ربط و بے معنی نظر نہیں آتا۔ یہ اس بات کا ثبوت ہے کہ اس نے یہ ترجمہ روا روی میں نہیں کیا۔
شاہد شبیر نے ” اینیمل فارم” کے ترجمے سے ایک مرتبہ پھر یہ بات ثابت کی ہے کہ پنجابی بھرپور تجریدی صلاحیت کی حامل زبان ہے جو معنی خیز الفاظ، موزوں تراکیب اور اسالیب اور متناسب اظہاری سانچے پیدا کرنے کی مکمل اہلیت رکھتی ہے۔ ” جناور جگت” ایک بے لوث سیوک کا اپنی ماں بولی کو پیش کیا گیا وہ گراں بہا تحفہ ہے جس نے پنجابی زبان کی مان مریادہ اور بھی بڑھا دی ہے۔

یہ آرٹیکلز بھی پڑھیں مصنف کے دیگر مضامین

فیس بک پر تبصرے

Loading...