میٹرک اوراو لیول کے اسلامیات کے نصابات کا تقابلی تجزیہ

612

پاکستان میں دسویں درجے کی تعلیم میں او لیول اور میٹرک، دو تعلیمی نظام رائج ہیں۔ میٹرک کا نصاب اور امتحان قومی وفاقی بورڈ علاوہ صوبائی تعلیمی بورڈز کے تحت بھی  ہوتاہے جب کہ او لیول کا نصاب اور امتحان زیادہ تر کیمبرج یونیورسٹی لندن کے تحت منعقد کیا جاتاہے۔ متعددسکولوں میں دونوں نصاب متوازی طو رپر متعلقہ طلبہ کو پڑھائے جاتے ہیں۔ دونوں نصابوں، طریقہ ہائے تدریس اور طریقہ ہائے امتحان میں بہت فرق ہے جس سے طلبہ کے علم، فہم اور اپروچ پر مختلف طرح سے اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ دونوں کی افادیت میں بھی بہت فرق پایا گیا ہے۔  قوم کو اسلامیات کی بہتر تعلیم دلانا حکومت کی آئینی ذمہ داری ہے۔جس کے لیے میٹرک کا اسلامیات کا نصاب تشکیل دیا  گیا ہے۔ اس نصاب میں  تعلیمی نقطہ نظر سے بہت سے جھول اورکمزوریاں پائی جاتی ہیں۔ درج ذیل مقالے میں میٹرک اور اولیول کے تحت اسلامیات کے نصاب کا موازنہ پیش کرنا مقصودہے جس سے یہ طے کرنے میں مدد ملے گی کہ کون سا نصاب اور نظام  کس لحاظ سےزیادہ مفید ہے اور یہ بھی کہ کس طرح اخذ و استفادہ کے اصول پر میٹرک کے اسلامیات کے نصاب میں بہتری لائی جا سکتی ہے۔

اس تحقیقی موازنے کے اگلے مراحل میں ہم او لیول اور اسلامیات کے اسلامیات کے لیے طریقہ تدریس اور طریقہ امتحانات کا تقابلی تجزیہ کریں گے۔

کلیدی الفاظ: تعلیم ،میڑک، او لیول،کیمبرج، نصاب، اسلامیات، اصلاحات

1.     تعارف:

اسلامیات کی معیاری تعلیم کی فراہمی حکومتی پاکستان کی آئینی ذمہ داری ہے۔ جس کا مقصد  دین اسلام کی درست تعلیمات کی روشنی میں مسلم طلبہ میں دین سےمحبت اور وابستگی پیدا کرنا ہے[1]۔تاہم میڑک کی سطح کا اسلامیات کا نصاب ان مقاصد کو کما حقہ پورا کرتا محسوس نہیں ہوتا۔

میٹرک  اوراولیول کے دو نظام ہائے تعلیم ہمارے ہاں سیکندڑی سطح کی تعلیم میں رائج ہیں۔ میڑک، قومی سطح پر وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے تحت رائج نظام تعلیم ہے اوراو لیول، کمبیرج یونیورسٹی لندن کے تحت بین الاقوامی سطح کا نظام تعلیم ہے جو ہمارے ہاں برٹش کونسل اسلام آباد کے زیر نگرانی چلایا جاتا ہے۔ تعلیم کے ان دونوں نظاموں میں اسلامیات کا نصاب کئی لحاظ سے مختلف ہے۔ زیرِ نظر مقالے میں ان دونوں نظاموں کے نصابوں کا موازنہ پیش نظر ہے جس کے نتیجے میں میٹرک کے نصاب میں اصلاحات کی تجاویز دی جائیں گی۔

اس تقابلی مطالعہ کے اگلے مراحل میں ان دونوں کے نظاموں کے تحت ان کے طریقہ ہائے تدریس اور طریقہ ہائے امتحان کا موازنہ بھی پیش کیا جائے گا، جو الگ مقالہ جات کا متقاضی ہے۔

2.     اولیول اور میٹرک کے نصاب کے اہداف و مقاصد:

اولیول کے نصاب میں اس نصاب کے اہداف و مقاصد درج ذیل بیان کیے گیے ہیں:

  • اسلام کے بنیادی ماخذوں، بنیادی عقائد اور ابتدائی تاریخ کا علم حاصل کرنا
  • مطالعہ اسلام کے لیے تفتیشی رجحان پیدا کرنا
  • زیر مطالعہ نصاب میں اٹھائے گیے دینی، تاریخی اور اخلاقی نوعیت کے سوالات کی سمجھ اور ان کے جوابات کے لیے جستجو پیدا کرنا

3.     جانچ کےمقاصد:

قسم سوال 1: ایمانیات اور تاریخ اسلام کے مرکزی عناصر کے بارے میں متعلقہ حقائق و معلومات کو یاداشت میں لانا، انتخاب کرنا اور پیش کرنا

قسم سوال2:تعلیماتِ اسلام اور مسلمانوں کی زندگیوں میں ان حقائق و معلومات کی اہمیت و افادیت کے فہم کا اطلاقی اظہار کرنا

اولیول کے نصاب میں اہداف اور مقاصد متعین صورت میں پیش کیے گیے ہیں۔ یہ جامع  مقاصد ہیں جو جدید تعلیمی اہداف کے مطابق بنائے گئے ہیں۔ ان کا مقصد طلبہ کو نہ صرف معلوماتفراہم کرنا ہے بلکہ ان میں علم کا فہم، جستجو اور تفتیش کا رجحان پیدا کرنا اور حاصل نتائج کا انفرادی اور سماجی سطح پر اطلاق کرنے کی صلاحیت پیدا کرنا بھی ہے۔

جب کہ میٹرک کے موجودہ نصاب میں اہداف اور مقاصد سرے سے بیان ہی نہیں کیے گیے، یعنی یہ معلوم نہیں کہ اس مخصوص نصاب کی تدریس سے مرتبینِ نصاب کے پیشِ نظر مقاصدکیا ہیں۔ نصاب سازی کے نقطہ نظر سے نصاب میں اہداف و مقاصد کی عدم موجودگی ایک حیرت انگیز امر اور ایک بنیادی خلا ہے۔

4.     میٹرک کا اسلامیات کا نصاب:

  • میٹرک کے اسلامیات کا نصاب کو جماعت نہم اور دہم کے دو حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ اور دونوں کا امتحان الگ الگ ہوتاہے۔
  • جماعت نہم کے لیے اسلامیات کا نصاب:
  • سورہ انفال مکمل
  • دس مختصر احادیثمع ترجمہ و تشریح
  • موضوعاتی مطالعہ چار ابواب
    • قرآن مجید (تعارف ،حفاظت، فضائل)
    • اللہ تعالی اور اس کے رسول کی محبت و اطاعت
    • علم کی فرضیت و فضیلت
    • زکوۃ (فرضیت، اہمیت، مصارف)
  1. جماعت دہم کےلیے اسلامیات کا نصاب:
    • سورہ احزاب مکمل
    • سورہ ممتحنہ مکمل
    • دس مختصر احادیث مع ترجمہ و تشریح
    • موضوعاتی مطالعہ
      • طہارت اور جسمانی صفائی
      • صبر و شکر اور ہماری انفرادی اور اجتماعی زندگی
      • عائلی زندگی کی اہمیت
      • ہجرت و جہاد
      • حقوق العباد (انسانی رشتوں سے متعلق حضور اکرم کی سیرت اور ارشادات)[2]

6.     اولیول اسلامیات کا نصاب:

او لیول کا نصاب  بھی دو حصوں میں منقسم ہوتا ہے جو دو پرچوں میں لیا جاتا ہے،تاہم یہ یک بارگی لیا جاتا ہے۔ ہمارے ملک کے سکولوں میں اسے عموما دو یا تین درجوں یعنی تین سالوں میں پڑھایا جاتا  ہے۔

  • پرچہ اول کا نصاب:
    • منتخب آیات میں قرآن کے نمایاں موضوعات:
    • اس کے تحت تین موضوعات شامل ہیں:
    • تعارفِ خدا (God in Himself)
    • منتحب آیات یہ ہیں:

2:255, 6:101-103, 41:37, 42:4-5,112,

  • خدا کا اپنی مخلوقات کے ساتھ تعلق

منتحب آیات یہ ہیں:

  • 1,2:21-22,96:1-5,99,114,
  • خدا کا اپنے رسولوں کے ساتھ تعلق

منتحب آیات یہ ہیں:

  • 2:30-37,6:75-79,5:110,93,108,
  • قرآن مجید کی تاریخ اور اہمیت۔ذیلی موضوعات میں درج ذیل عنوانات شامل ہیں:
    • تاریخ وحی
    • تاریخ تدوین قرآن
    • قرآن کے نمایاں موضوعات کا مطالعہ مقرر شدہ آیات اور اس سے ملتی جلتی آیات کے ساتھ
    • اسلامی قانونی سازی میں قرآن، حدیث، اجماع اور قیاس کا باہمی تعلق
    • اسلامی فکر و عمل میں قرآن کی اہمیت
  • رسول اللہ ﷺ کی سیرت اور اہمیت
    • اس میں مکمل سیرت شامل ہے اور اس کے ساتھ سیرت بطور نمونہ عمل سے متعلق عنوانات شامل ہیں۔
  • پہلی اسلامی برادری
    • ازواج مطھرات، اولاد و احفا،مہاجرین اور انصار، عشرہ مبشرہ، کاتبین وحی
  • پرچہ دوم کا نصاب
    • منتخب احادیث میں موجود نمایاں تعلیمات۔ اسے دو بڑی موضوعات کے تحت تقسیم کیا گیا ہے:
      • انفرادی رویہ
      • اجتماعی یا سماجی رویہ

اس درجے میں20 احادیث شامل ہیں۔

 

  • تاریخ حدیث اور اس کی اہمیت۔ اس میں درج ذیل عناوین شامل ہیں:
    • تاریخ تدوینِ حدیث
    • ابتدائی کتب احادیث
    • نمایاں مسند اور مصنف کتب احادیث
    • نمایاں جامعین حدیث اور ان کی سرگرمیاں
    • جرح وتعدیل کے اصول
    • صحاح ستہ اور کتب اربعہ (اہل تشیع) کی چیدہ چیدہ خصوصیات
    • منتخب احادیث کے نمایاں موضوعات
    • حدیث بطور ماخذ قانون، اور قران، اجماع اور قیاس کے ساتھ اس کا تعلق
    • اسلامی فکر و عمل میں حدیث کا کردار
  • سیرت خلفاء راشدین
  • بنیادی عقائد
  • ارکان اسلام[3]

7.     تنقید اورموازنہ

میٹرک کے نصاب کے مقابلے میں دیکھاجا سکتا ہے کہ اولیول کا نصاب دین اسلام کے تقریبا تمام بنیادی علمی، تاریخی، اصولی اور اخلاقی پہلوؤں کا ایک جامع انتخاب پیش کرتا ہے؛ جب کہ میٹرک کے نصاب کا زیادہ تر حصہ قرآنی سورتوں، سورہ انفال، سورہ احزاب اور سورہ ممتحنہ پر مشتمل ہے۔ حدیث کا نصاب اس کے مقابلے میں بہت کم یعنی صرف 20 مختصر احادیث شامل ہیں۔ بقیہ نصاب 8 مختصر موضوعاتی ابواب پر مشتمل ہےجو طہارت اور جہاد کے علاوہ اخلاقی موضوعات پر مشتمل ہے۔

8.     قرآنی سورتیں اور منتخب آیات:

میٹرک کااسلامیات کا مروجہ نصاب ایک غیر متوازن نصاب ہے۔[4] اس میں شامل سورتوں کا انتخاب کن اصولوں کے تحت کیا گیا ہے یہ واضح نہیں۔ تینوں سورتیں مدنی ہیں، کوئی مکی سورہ شامل نہیں، جب کہ دونوں طرح کی سورتوں کی اپنی الگ اہمیت ہے۔ سورہ انفال اور سورہ احزاب دو جنگوں: جنگ بدر اور جنگ خندق سے متعلق ہیں، جب کہ ممتحنہ میں بھی اہل مکہ سے دشمنی  اور دوستی کا پہلو زیر بحث ہے۔یوں غالب موضوع جنگی موضوعات بنتے ہیں۔ ابواب میں بھی ایک باب ہجرت و جہاد سے متعلق شامل ہے۔ گویاتقریبا 75 فیصد نصاب جنگ و جہاد کے موضوعات پر مشتمل ہے ۔اس سے پہلے سورہ توبہ بھی نصاب میں شامل تھی جو تمام تر جہاد سے متعلق تھی، مگر بعد ازاں اسے خارج کر دیا گیا تھا۔

پیغام پاکستان کے تناطر میں ہماری ریاست نج کے جہاد سے کنارہ کشی کا اعلان کر چکی ہے اور تمام مکاتب فکر سے اس اعلامیے پر دستخط بھی کرا چکی ہے۔ اس نئے تناظر میں جنگ و جہاد سے متعلق مواد بغیر مناسب اختیاطی تدابیر کے شاملِ نصاب کرنا مناسب معلوم نہیں ہوتا۔اس نصاب میں شرائط جہاد، اقسام جہاد وغیرہ پر کوئی باب یا بحث شامل نہیں ہے۔

جنگ و جہادمیں کیا نازک امور پیش نظر ہوتے ہیں،یہ کن شرائط اور مواقع پر کیے جاتے ہیں، حالات و زمانہ یعنی عرف کی تبدیلی سے ان کے اطلاقات میں مزید کن رعایتوں کو مد نظر رکھنا ضروری ہو جاتاہے، بین الاقوامی قانون کے تحت بین الاقوامی معاہدات سےپیدا ہونے والے حالات سےکیا فرق پڑا ہے۔[5] یہ سب اہل علم کے درمیان پیچیدہ مباحث کا میدان ہے۔[6] ایک بی اے یا ایم اے پاس اسلامیات یا دینی مدرسہ کے فاضل استاد سے جہاد اور شرائط جہاد جیسےنازک موضوعات کے لیے درکار علمیت کی توقع عموما نہیں کی جاسکتی۔نیز استاد اگر ان مباحث اور ان کی باریکیوں سے واقف بھی ہوتو وہ اس درجے کے کم سن طلبہ کو یہ باریکیاں باور نہیں کرا سکتا ۔

ہماری یورنیورسٹیز میں بڑھتی ہوئی مذھبی شدت پسندی کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ تعلیم کے ان درجوں میں اسلامیات کا نصاب ان تمام احتیاطوں کے ساتھ مرتب نہیں کیے گئے اور نہ پڑھائے جاتے ہیں جس کا یہ نازک مضمون تقاضا کرتا ہے اور نہ ہی اساتذہ کی اس لحاظ سے مناسب تربیت ہی کی جاتی ہے۔[7]

سورہ احزاب میں موضوعات کا تنوع پایا جاتا ہے۔ جنگ احزاب کے بیان کے علاوہ، ظہار، متبنی بنانے اور اس کی مطلقہ سے نکاح کا مسئلہ، ازاوج مطھرات کا پردہ، عام خواتین کا پردہ، منافقین کا طرزعمل،غزوہ بنو قریظہ،رسول اللہ سے متعلق خصوصی قوانین، تعدد ازواجِ نبی کا مسئلہ، ختمِ نبوت،طلاق و عدت، جیسے مسائل پر مشتمل اس سورہ کے مضامین کو میٹرک کے طلبہ کو ایک سال کے مختصرسے وقت میں سمجھانا ہی ایک مشکل بلکہ ناممکن امرہے۔ مولانا امین احسن اصلاحی جیسے مفسر کبیر اپنی تفسیر، تدبرِ قرآن  میں لکھتےہیں:

“یہ سورہ قرآن حکیم کی مشکل سورتوں میں سے ہے اور میں اس پر قلم اٹھانے سے گھبراتا رہا ہوں۔ اگرچہ اس کی مشکلات، اپنے علم کے حد تک، میں نے بہت پہلے حل کر لی تھیں لیکن یہ تردد سراسر دامن گیر رہا کہ دل و دماغ میں جو کچھ ہے قلم اس کو ادا بھی کر سکے گا یا نہیں۔ اب یہ فیصلہ تو کتاب کے صاحب نظر قارئین کر سکیں گے کہ میں مشکلات سے عہدہ برآ ہو سکا یا نہیں اور ہو سکا تو کس حد تک لیکن میں نے کوشش بہت کی ہے۔”[8]

میڑک کے طلبہ کو اسلامیات کے علاوہ دیگر سات مضامین بھی پڑھائےجاتے ہیں جن میں سائنس  کے مضامین خصوصاً ان کے اذھان پر چھائے رہتے ہیں۔ ایسے  میں وہ خصوصا سورہ احزاب میں شامل ان دقیق مسائل کوسمجھنے کی پوری اہلیت رکھتے ہیں نہ وقت۔ یہ سورہ  تعلیم کے اگلے درجوں میں پڑھائی جانی چاہیے جب طلبہ کی ذہنی سطح ان مباحث کے سمجھنے کے لائق ہو۔ان معروضا ت کی روشنی میں یہ کہنا بےجا نہ ہوگا کہ سورہ احزاب کو اس سطح کے طلبہ کے لیے اتنے کم وقت کے نصاب میں شامل نصاب کرنا نادرست ہے۔

طلبہ کی دینی تعلیم کی ضروریات متنوع ہوتی ہیں۔ کسی ایک سورت میں تمام مطلوب مضامین اس ترتیب سے شامل نہیں ہو سکتے جو تعلیمی ضروریات کے لیے مرتب نصابات میں ہونے چاہیے۔ اسی لیے ماہرین تعلیم یہی بہتر سمجھتے ہیں کہ بچوں کی ذہنی سطح اور تعلیمی ضرورت کے پیش نظر قرآن مجید سے آیات کا انتخاب مختلف موضوعات کے تحت پیش کیا جائے۔ اس کا ایک نمونہ او لیول کے نصاب میں دیکھ لیا جا سکتا ہے جہاں تین مرکزی موضوعات کے تحت پانچ پانچ آیات کا ایک انتخاب مرتب کیا گیاہے۔ میٹرک کے نصاب کی تیاری  میں زیادہ یا مختلف اوربہتر موضوعات طے کر کے ان کے تحت آیات کا انتخاب کیا جا سکتا ہے۔

اس درجے میں پوری سورتیں شامل نصاب کرنے سے یہ مسئلہ بھی پیش آتا ہے کہ سورتوں کی تفسیر بھی کرنا پڑ جاتی ہے جو سورتوں کا پس منظر اورسیاق و سباق سے اچھی واقفیت کے بنا ممکن نہیں۔ اس کے لیے تفاسیر کو دیکھنا پڑتاہے۔ بی اے یا ایم اے پاس اساتذہ عموما اتنے معیار علم کے حامل نہیں ہوتے کہ وہ ان مباحث کو تفاسیر کی مدد سے بھی سمجھا سکیں اور اگر وہ کوشش بھی کریں تو اس کے لیے میسر وقت کم ہوتا ہے۔ نتیجتاً طلبہ ان سورتوں کے مطالب اچھی طرح سمجھے بنا ہی ترجمہ کو رٹا لگا کر امتحان پاس کرنے کی کوشش میں لگے رہتے ہیں، سورتوں کے مطالب کی تفہیم پس منظر میں چلی جاتی ہے۔ چنانچہ مرتبین نصاب کا مقصد اگر طلبہ میں قرآن فہمی کا ذوق پیدا کرنا تھا تو یہاں حاصل نہیں ہو پا رہا۔

9.     اسلام کی ابتدائی تاریخ:

میٹرک کے نصاب میں قرانی سورتوں کے اس طویل نصاب اور ان سورتوں کا ترجمہ رٹنے کی مشقت کی وجہ سے عملا یہ ممکن نہیں کہ اس نصاب میں سیرت نبی، سیرت خلفا راشدین، تعارف حدیث، تاریخ تدوین حدیث، اصول جرح و تعدیل، ماخذ شریعت اور دیگر ضروری موضوعات شامل کیے جا سکیں جیسا کہ  اولیول کی نصاب میں شامل ہیں۔ سیرت نبی اور سیرت خلفا راشدین کو تعلیمی نصاب کا حصہ نہ بنا سکنے کی بنا پریہ میدان قصہ گو واعظوں اور غیر مستند معلومات کے لیے کھلا چھوڑ دیا گیا ہے۔ ایک عام فرد کی سیرتِ نبی اور سیرتِ خلفا راشدین سے متعلق معلومات عموماً نہایت سطحی ہوتی ہیں، چنانچہ یہ ادھوری بلکہ بسا اوقات غلط معلومات مسلمانوں میں آپس کی فرقہ واریت، شدت پسندی، حد سے بڑھی ہوئے ہوئے جذبات کی شکل میں مختلف المیوں کو جنم دیتی رہتی ہے۔ اس کا مناسب حل یہی ہے کہ ابتدائی تاریخ اسلام سے متعلق متوازن اور مستند معلومات کو نصاب کا حصہ بنایا جاتا۔

یہ درست ہےکہ اسلام کی ابتدائی تاریخ خصوصا شیعہ اور سنی مکاتب فکر کے درمیان کچھ مقامات پر نزاعی نوعیت کی ہے، لیکن اس نزاع کے منفی نتائج سے بچنے کا حل بھی اس نزاع کا سامنا کرنا اور دونوں نقطہ ہائے نظر کو طلبہ کے سامنے مثبت انداز میں پیش کرنا ہے۔ ان تاریخی نزاعات کا حل تو ممکن نہیں لیکن  ایک دوسرے کا نقطہ نظر مثبت انداز میں احترام باہمی کے ساتھ جان لینے سے کم از کم وہ قوت برداشت پیدا ہو جاتی ہے جس سے اختلاف کے رہتے ہوئے بھی اختلاف راے جھگڑے کا روپ نہیں دھارتا۔ اس پہلو کو نظر انداز کرنے سے ہمارا سماج شدت پسندوں اور فرقہ پرست مقررین کی شعلہ بیانی کی وجہ سے نئی نسلوں میں ایک دوسرے کے لیے عدم برداشت پیدا کرتا ہے۔ مکالمہ شدت پسندی کے خاتمہ کا بہترین ذریعہ ہے اس کی بنیاد نصاب کی صورت میں دسویں کی سطح پر کرنا بہترین حکم عملی ہو سکتا ہے۔ اس کے لیے لیکن استاد کی مناسب تربیت کی ضرورت ہے جس کا اہتمام او لیول  کی تعلیم کے حامل سکول عموما کرتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ابتدائے اسلام کی تاریخ پڑھانے کے باوجود او لیول کے سکولوں میں فرقہ واریت پر مبنی کوئی نمایاں واقعہ اور رجحان ریکارڈ پر موجود نہیں۔ او لیول کے طلبہ میں مذھبی شدت پسندی بھی عموما ًدیکھنے میں نہیں آتی۔

10.  عقائد اور ارکان اسلام:

بنیادی عقائد اور ارکان اسلام  کی اہمیت مسلّمہ ہے لیکن شایداس بھروسے پر کہ نیچے کے درجوں میں یہ معلومات اسلامیات کے نصاب میں پڑھا دی جاتی ہیں، میٹرک کے نصاب میں شامل نہیں کی گئیں۔ یہ ایک مناسب جواز ہو سکتا ہے تاہم اس درجے میں طلبہ کی سطح فہم زیادہ بہتر ہوتی ہے،نیز اس درجے کے طلبہ نو بالغ ہوتے ہیں۔ ارکان اسلام  پر عمل کا وقت حقیقتا یہی ہے۔ مناسب ہے کہ اس درجے میں بھی عقائد اور ارکان اسلام کے موضوعات شامل نصاب کیے جانے چاہییں۔

مزید برآں یہ بھی ہونا چاہیے اس عمر کے نو بالغ طلبہ کی جنسی اور اخلاقی ضروریات کو مد نظر رکھتے ہوئے متعلقہ آیات اور احادیث اور ابواب کو بھی شامل نصاب کیا جائے۔ معلومات کے وفور کے اس دور جدید میں جب ہر قسم کی معلومات انٹر نیٹ سے ایک کلک کے فاصلے پر موجود ہوتی ہے، ان کی جنسی اور جذباتی ضروریات کے پیش نظر مواد شامل نصاب کرنا ضروری ہے تاکہ ان کی درست رہنمائی کی جا سکے۔ہم اگر یہ چاہتے ہیں کہ سیکس ایجوکیشن جیسا کھلا ڈھلا نصاب شامل نہیں کرنا تو اس کا متبادل بھی ہمیں مہیا کرنا ہوگا تاکہ اپنی دینی اور تھذیبی اقدار کو برقرار رکھتے ہوئے طلبہ کواس قسم کے چیلنچز کے لیے بھی تیار کیا جا سکے۔ طہارت و پاکیزگی کے عنوان سے ایک باب شامل نصاب ہے لیکن وہ طلبہ کی یہ ضروریات پوری نہیں کرتا۔

11.  ماخذ شریعت:

اولیول کے نصاب میں شریعت کے بنیادی ماخذ: قرآن، سنت، اجماع اور قیاس کو شامل نصاب کیا گیا ہے۔ اس سے دین کی علمی بنیادوں کے بارے میں طلبہ کو علم حاصل ہوتا ہے۔ نیز وہ اجتہاد کی اہمیت اور افادیت سے واقف ہوتےہیں۔ میٹرک کے اسلامیات کے نصاب میں یہ موضوع سرے سے شامل ہی نہیں۔

12.  تعارف حدیث، تاریخ تدوین حدیث اور اصول جرح و تعدیل

او لیول کے اسلامیات کے نصاب میں نہ صرف 15 احادیث نصاب کا حصہ ہیں بلکہ تعارف حدیث، تاریخ تدوین حدیث، احادیث کو پرکھنے کے معیارات اور احادیث کی اقسام سے متعلق جامع موضوعات پر مشتمل تعارف، شامل نصاب ہے، جس سے طلبہ میں حدیث کے ساتھ علم و فہم پر مبنی رویہ استوار ہوتا ہے اور حدیث سے متعلق اعتماد بھی پیدا ہوتا ہے۔ لیکن میڑک کے اسلامیات کے نصاب میں یہ موضوعات سرے سے موجود نہیں۔

13.  سنی اور شیعہ کتب اور ائمہ کا تعارف

او لیول کے نصاب میں سنی مکتبہ فکر کی صحاح ستہ کے علاوہ، شیعہ کی کتب اربعہ کا تعارف بھی شامل ہے۔ نیز اہل سنت و الجماعت کے ائمہ اربعہ کے علاوہ ائمہ اہل بیت کا تعارف بھی شامل ہے۔ اس طرح ایک ہی چھت کے نیچے اسلام کے دو بڑے مکاتب فکر کے طلبہ کا ایک دوسرے سے مثبت انداز میں تعارف کرانے کا موقع فراہم کیا گیا ہے۔ میٹرک کے نصاب میں ایسا کوئی مواد شامل نہیں۔ چنانچہ یہاں بھی یہ میدان خطبا اور ذاکرین کے لیے کھلا ہے جو ایک دوسرے کے منفی تعارف سے فرقہ واریت پیدا کرنے میں کامیاب رہتے ہیں یا کم از کم دونوں مکاتب کے افراد ایک ہی سماج میں رہتے ہوئے ایک دوسرے سے مکمل طور پر اجنبی اور متنفر رہتے ہیں۔ جب تقابل ادیان کے مطالعہ کے تحت غیر اسلامی ادیان کا علمی تعارف و مطالعہ اس بنا پر کرایا جاتا ہے کہ دیگر مذاھب بھی ایک سماجی حقیقت ہیں، ان کا جاننا بھی ضروری ہے تو سنی اور شیعہ مکاتب فکر بھی ایک سماجی حقیقت ہیں ان کے بارے میں بھی تعارفی مواد نصاب کا حصہ ہونا چاہیے۔

14.  جہاد اور اقسام جہاد

او لیول میں جہاد، اقسام جہاد، مسلم ریاست کا دیگر ریاستون سے تعلق کی نوعیت وغیرہ سے متعلق جامع موضوعات شامل ہیں۔ جب کہ میڑک کے نصاب میں ہجرت و جہاد سے متعلق ایک باب شامل ہے جو مختصر ہونے کی بنا پر اس نازک موضوع کے ضروری پہلوؤں کا احاطہ نہیں کرتا۔

15.  متعین نصابی کتاب اور نامزد کتب

او لیول میں فقط نصاب فراہم کیا جاتا ہے، بورڈ کی طرف سے کوئی کتاب بطور نصابی کتاب نہیں دی جاتی۔ یہ طلبہ اور اساتذہ کے انتخاب پر چھوڑ دیا جاتا ہے کہ وہ نصاب پر مشتمل کون کون سی کتب اور ماخذات سے تیاری کریں گے۔البتہ کچھ کتب نامزد کر دی جاتی ہیں۔ لیکن میٹرک کی اسلامیات کا نصاب اور اس کی متعین نصابی کتاب بھی بورڈ کی طرف سے جاری کی جاتی ہے۔ اس سے نہ صرف یہ کہ طلبہ میں دیگر کتب سے استفادہ اور جستجو کی راہ بند ہو جاتی ہے بلکہ بنے بنائے نوٹس کی مدد سے وہ بغیر کچھ سمجھے امتحان کی تیاری کر کے پرچہ حل کر آتے ییں۔ متعین کتاب کی بجاے کتب نامزد کرنی چاہییں۔

16.  سروے:

مقالے سے موضوع سے متعلق سوشل میڈیا پر ایک سروے راقم نے منعقد کیا۔ اس میں اعلی تعلیم یافتہ والدین اور اساتذہ اورتعلیمی ماہرین کے علاوہ مذھبی طبقہ سے تعلق رکھنے والے والدین اور اساتذہ بھی شامل تھے، ان سب نےمیٹرک کےنصاب کو ناقص قرار دیا اور ان میں سے جن افراد کو اولیول کے بارے میں بھی علم تھا، انھوں نے او لیول کے نصاب کو بہتر قرار دیا تاہم کچھ افراد نے اسے بھی ناکافی قرار دیا۔او لیول کے اساتذہ اور او لیول کے طلبہ کے والدین نے یہ اعتراف کیا کہ او لیول کے طلبہ کی دینی معلومات اور فہم میٹرک کے طلبہ کے مقابلے میں کہیں بہتر ہوتے ہیں۔مولانا عمران بابر معلم اسلام آباد ماڈل کالج برائے طلبہ جی سکس/ تھری کے مطابق، “اسلامیات کی کتب سازی اورکریکولم ونگ میں میٹرک اور انٹر کا تجربہ رکھنے والے اساتذہ کی نمائندگی معدوم ہے۔ یہاں یونیورسٹی کے وہ اساتذہ شامل ہیں جن کے تعلقات عامہ کا شعبہ تو مضبوط ہے لیکن عملا پڑھانے کا تجربہ نہ ہونے کے برابر ہے… آپ ان کتابوں کے مصنفین کے ناموں پر بھی غور کرکے اصل نتیجے تک پہنچ سکتے ہیں۔ویسے دونوں نصاب میں خامیاں موجود ہیں۔”[9]

شہنیلہ بیلگم والا، معلم سینٹ کیتھولک ہائی سکول دوبئی نے تبصرہ کیا، “میں پچھلے تیرہ سالوں سے religious studies پڑھا رہی ہوں او لیولز کو۔ اس کے موضوعات بہت ہی دلچسپ اور پریکٹیکل ہیں۔ بچوں کو بالکل رٹنا نہیں پڑتا۔ سمجھ کر خود جواب لکھتے ہیں اور اس سبجیکٹ کو بہت پسند کرتے ہیں۔”[10]

خلاصہ کلام اور سفارشات:

میڑک کا نصاب غیر ضروری طور پر تین قرآنی سورتوں اور ان کے ترجمے کو یاد کرنے کی مشقت کی وجہ سے ایک غیر متوازن اور بوجھل نصاب ہے۔ قرآنی سورتیں بھی سب مدنی ہیں جو زیادہ تر جنگ و جہاد سے متعلق ہیں۔ جنگ و جہاد کا نازک موضوع جن احتیاطوں اور علمی نزاکتوں کا متقاضی ہے وہ یہاں مفقود ہیں۔ اب جب کہ ریاست پاکستان جہاد سے متعلق نج کے مسلح گروہوں سے دست کش ہو چکی اور پیغام پاکستان کے نام سے شدت پسندی کے خلاف ایک متفقہ بیانیہ بھی اخیتار کر چکی ہے، ہمارے میٹرک کے نصاب میں بھی اس نیے تناظر میں بنیادی تبدیلیوں کی ضرورت ہے۔

یہ نصاب طلبہ کی دینی ضروریات پر پوری نہیں کرتا۔ نصاب میں سیرت نبی شامل ہے نہ سیرت خلفا، قانون اسلامی کے بنیادی ماخذات، تعارف حدیث، تاریخ تدوین حدیث، اصول جرح و تعدیل،  جہاد اور اقسام جہاد، مسلم ریاست کے دیگر ریاستوں سے تعلقات، عقائد اسلام، ارکان اسلام وغیرہ جیسے ضروری موضوعات جو کہ او لیول کے اسلامیات کے نصاب میں شامل ہیں، میڑک کے نصاب میں نہیں پائے جاتے۔

متعین نصابی کتاب کی بجائے کتب نامزد کی جائیں اور کتب کا انتخاب اساتذہ اور طلبہ پر چھوڑ دیا جائے۔ شیعہ اور سنی ائمہ اور بنیادی کتب کا تعارف دونوں مکاتب فکر کے بارے میں ایک مناسب تعارف ہے۔ اس سے اجنبیت کی دیواریں گریں گی اور اختلاف راے رکھتے ہوئے بھی احترام باہمی کی فضا ہموار ہوگی۔

او لیول کا اسلامیات کا نصاب جو جدید تعلیمی معیارات کے مطابق تیار کیا گیا ہے، میڑک کے نصاب کی تیاری میں ممد و معاون ہو سکتا ہے۔

[1] نیشنل ایجوکیشنل پالیسی 2017-2025، باب ششم، ص 20-25، وزارت تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت پاکستان

[2] اسلامیات، نصابی کتاب برائے نہم و دہم، پنجاب ٹیکسٹ بک بورڈ لاہور

[3]O Level Islamiyat, Syllabus for 2017, 2018, 2019, Code: 20158, Cambridge International Examination.

[4] “Teaching Islamiat, Amin Valliani”, Newspaper Dawn, 7 Nov, 2014, https://www.dawn.com/news/1142758

[5]تفصیل کے لیے دیکھیے:جہاد، مزاحمت اور بغاوت از ڈاکٹر محمد مشتاق احمد، کتاب محل، لاہور

[6]تفصیل کے لیے دیکھیے: جہاد ایک مطالعہ از عمار خان ناصر، المورد ،لاہور

[7]For details see,“Rise in extremism”, Arsla Jawaid NewspaperDawn, January 02, 2018, https://www.dawn.com/news/1380278

“Pakistani universities battle on-campus extremism”, “Extremism at universities is a complex threat, says an Institute of Strategic Studies report”,By Javed Mahmood, Pakistan Forward, http://pakistan.asia-news.com/en_GB/articles/cnmi_pf/features/2017/10/17/feature-01

Extremism in Universities by Yaqoob Khan Bangash, Daily Times, Sep 19, 2017, https://dailytimes.com.pk/116285/extremism-in-universities/

“مدرسے کے شدت پسند طلبہ کی جگہ جامعات کے اعلیٰ تعلیم یافتہ طالب علم لے رہے ہیں”، ریاض سہیل، بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی، 13 جولائ 2017، https://www.bbc.com/urdu/pakistan-40588909

[8]تفسیر تدبر قران،  مولاناامین احسن اصلاحی، جلد 8، اختتامی نوٹ تفسیر سورہ احزاب۔

[9]https://www.facebook.com/irfan.shahzad.2008/posts/2313779251986584?comment_id=2313795815318261&reply_comment_id=2313886285309214&notif_id=1552809059440022&notif_t=feed_comment

[10]ایضاً

یہ آرٹیکلز بھی پڑھیں مصنف کے دیگر مضامین

فیس بک پر تبصرے

Loading...