سکردو میں ادبی سرگرمیاں

306

معروف طبیب اور شاعر و ادیب سید تقی عابدی نے پچھلے دنوں بلتستان کا مختصر دورہ کیا۔ سکردو میں ملک کے دیگر بڑے شہروں کے مقابلے میں زیادہ نہیں توکچھ کم ادبی سرگرمیاں بھی نہیں ہوتیں۔ ہر ہفتے ایسی کسی سرگرمی کا انعقاد کیا جاتا ہے۔ انہوں نے ایوانِ اقبال میں علامہ اقبال کی شاعری میں مقام آدمیت و انسانیت کو اُجاگر کرتے ہوئے پُرمغز گفتگو کی۔ ڈاکٹر تقی عابدی کسی بھی فرد کے فن و شخصیت پر گفتگو کرتے ہیں تو اُس کی زندگی کے ایک ایک گوشے پر اس انداز سے روشنی ڈالتے ہیں کہ حقیقی معنوں میں مذکورہ شخصیت کی خدمات کو اُجاگر کرنے کا حق ادا کرتے ہیں۔ یوں شخصیات کی زندگی، فن اورتصورات سے متعلق حقیقی پہلو لوگوں کے سامنے آتے ہیں۔

اُسی روز انہوں شام کو بزمِ علم و فن ہی کے زیر اہتمام ایک محفل مشاعرہ کی صدارت کی۔ اُنہوں نے مقامی نوجوان شعراء کے کلام کے معیار کی تعریف کی اور شعراء کے بلند تخیلات کو سراہا۔ محفل سے گفتگو میں انہوں نے سکردو کے قدرتی حُسن کی تعریف کی اور کہا کہ یہاں کے قدرتی مناظرکا عکس یہاں کے شعراء کے کلام میں نمایاں نظرآتاہے۔ اگلے روز کے لیے بھی مقامی میزبانوں نے ڈاکٹر تقی عابدی کے لیے بہت ہی مصروف شیڈول ترتیب دے رکھا تھا۔ مقامی ہوٹل میں ہونے والے پروگرام کے لیے موضوع ”انیس ودبیر، آسمان مرثیہ نگاری کے آفتاب و ماہتاب“ کاانتخاب کیا گیا تھا۔

ادبی محفل کے بعد ڈاکٹر تقی عابدی بلتستان کے مؤرخ و ادیب محمد یوسف حسین آبادی کے قائم کردہ میوزیم پہنچے۔ جہاں انہوں نے بلتستان کی تہذیب و ثقافت سے متعلق صدیوں پہلے کے نوادرات کے ذریعے بلتستان کے ماضی سے متعلق آگہی حاصل کی۔ انہوں نے ان نوادرات میں گہری دلچسپی کا مظاہرہ کیا اور میوزیم کو باہرکی دنیا تک متعارف کرانے کے لیے تجاویز دیں۔ ڈاکٹر صاحب کے  پرگراموں میں شرکاء کی بڑی تعداد تعلیم یافتہ اور صاحب فہم لوگوں پرمشتمل رہی۔ انہوں نے پریس کلب سکردو میں ”اردو کی ترقی کے مسائل اور وسائل“ کے موضوع پر لیکچر دیا۔ اُن کا کہنا تھا کہ یہ جان کر خوشی ہوئی کہ  بلتستان میں اردو زبان منفرد لب و لہجے کے ساتھ پرورش پا رہی ہے۔ ادبی مرکز سے دوری کے باوجود اہل سکردو کا لہجہ اہل زبان سے گہری مماثلت رکھتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اردو زبان پرمرثیہ کا احسان ہے کہ اس صنف نے یہاں اردو کو مقبولِ عام بنانے میں بڑا کردار ادا کیا ہے۔ اس موقعے پر ڈاکٹر تقی عابدی نے جہاں انیس و دبیر کے مرثیوں کا حوالہ دیا وہاں گلگت بلتستان اسمبلی کے سپیکر حاجی فدا محمد ناشاد کے کلام پر مشتمل زیر طبع مرثیوں کے مجموعے کا ذکربھی کیا اور کہا کہ اس علاقے سے اردو زبان میں پہلا مرثیہ کہنے کا اعزاز حاصل کرنے والے اس شاعرکے اس کلام کو بھی اردو کا شاہکار مرثیہ ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔ ڈاکٹر تقی عابدی نے حاجی فدا محمد ناشاد کے جس مرثیے کو دوران لیکچرپڑھ کر سنایا اُس کا اقتباس پیش خدمت ہے

جب  شاہ  نے  مدینہ  سے  عزم  سفر  کیا

اہل ِ  حرم  کو   ہم   شرفِ    رہگذر  کیا

عمّامہئ   رسولِ    خداؐ    زینب    سر   کیا

آسیب  و  اِبتلا   نے  مدینے  میں  گھر  کیا

ویران   ہو   رہا   ہے   مدینہ   رسول   ؐ کا

لو  کوچ   کر  رہا  ہے  یہ  کنبہ  بتول   ؑ کا

غوغائے   الوداع ،  زمین  و  زماں  میں  ہے

افسردگی   کا کیف  مکین   و   مکاں  میں  ہے

سبطِ  رسول ؑ  کشمکش  ِ این    و    آں  میں   ہے

ماحول  سوگ  کا  ہے  جو  سارے جہاں  میں ہے

آتی  ہے  ہر   طرف   سے   صدا  اَلامان  کی

رونق   چھِنی   ہے  آج   نبیؐ   کے   مکان  کی

شبیر  ؑ آگئے   ہیں   زیارت   کے   واسطے

قبر  ِ نبی ؐ  پہ   آخری   رخصت   کے  واسطے

عباسؑ   ساتھ  ساتھ  حفاظت  کے  واسطے

مولاؑ  نے  یوں  پکارا   اجازت  کے   واسطے

نانا   سلام  آپ   پہ،  رخصت  عطا  کریں

مکّے  کو  جا  رہا  ہوں،  اجازت  عطا  کریں

رخسار  جب  امام  ؑ نے  تُربت  پہ  رکھ  دیا

ہلنے       لگا     مزارِ      شہنشاہ      اَنبیاؐ

اَرض    و  سماء   لرز    گئے   محشر   ہوا   بپا

چاروں  طرف  سے  رونے  کی  آنے  لگی  صدا

پُر  درد  تھی     فضا،  سخنِ   دِل   فگار    سے

لگتا  تھا   یوں،   نکلتے   ہیں  حضرت  ؐ مزار  سے

آئے    وہاں   سے    فاطمہ  زہرا ؑ  کی  قبر    پر

آنسو   بہا   رہے    تھے     شہنشاہِ   بحر    و   بر

اصحاب  رو     رہے     تھے  مسلسل  جھُکائے   سر

چہرے  سبھی  کے  ہوگئے  تھے  آنسوؤں  سے  تر

کیا  کیا  نہ  امتحاں  تھے  مصیبت  کے  یہ  کڑے

ماں   کی  لحد  پہ  حزن   سے  شبیر    ؑ گِر    پڑے

بھائی   حسنؑ   کی   قبر   مطہر   بھی   تھی    قریب

مرقد   پہ   اُن  کے   آگئے  شاہِ    سفر  نصیب

ہاتھوں  کو  رکھ  کے  قبر  پہ  فرماتے  تھے  نجیب

مکّے  کی  سمت  جاتا    ہوں  بھیّا  میں  عنقریب

کر   لیجئے    دُعا!   ”یہ   سفر      خوشگوار    ہو“

قاسم  ؑ کو   ساتھ   لیتا   ہوں   تاکہ  قرار    ہو

پہنچے  حرم   میں   لوٹ   کے   یثرب  کے  بادشاہ

سب   منتظر  رواقِ   حر م   میں   تھے،  تکتے   راہ

ہر  ایک  مضطرب  تھا  لبوں  پر  تھی  سب  کے  آہ

سبط   ِ نبی   ؑ نے   غور   سے   مجمع   پہ   کی    نگاہ

ناگاہ   اِک   غلام   نے  آقا  کو   دی   خبر

حجرے  میں  حالِ     فاطمہ   ؑ بیمار   ہے    دِگر

سبطِ   رسولؐ    داخلِ   بیت    الشرف   ہوا

پہلو    میں   اپنے    دخترِ     بیمار   کو   لیا

رکھ  کر  جبیں   پہ  دست   ِ مبارک  کو،  کی  دعا

صغر ا   نے  آنکھ  کھولی،  تو  کی  رو  کے   التجا

میں   ہوں  علیل  مجھ  سے  نہ  دامن   بچایئے

مجھ  کو  بھی    اپنے    ساتھ  مسافر     بنایئے

یہ آرٹیکلز بھی پڑھیں مصنف کے دیگر مضامین

فیس بک پر تبصرے

Loading...