ایک بے تکلف مکالمہ اور تاریخ کی دہرائی

کون کس کی زلف کے سر ہونے تک جیتا ہے اسے تو غالب مرحوم و مغفور نے یوں حل کیا کہ جب آپ کی آہ سحرہونے تک اثر کرپائے گی تب۔ یعنی یہ عمر عزیز اسی سڑک پر کسی لال بتی کی پیچھے دوڑتی بھاگتی پھرے گی۔ خیر جب آپ واپس آئیں گے تو پوچھیں گے چن مکھناں نے…

Virtual reality اور انفارمیشن کا دور

قلم برداشتہ لکھنے سے دل برداشتہ لکھنا کبھی کبھار بہتر اس لیے ہوتا ہے کہ بعض اوقات بار خاطر پر گراں گزرنا ازبس ضروری ہوجا تا ہے۔مسئلہ یہ ہے کہ اس پیچیدہ دور میں جہاں آپ کو یہ علم بھی نہیں ہوتا کہ ملنے والی اگلی معلومات کیا ہوسکتی ہیں۔دھڑام…

لا تعلق معاشرہ ، مائنڈ سیٹ اور عفریت

          یہ ایک تلخ حقیقت ہے کہ ہمارے ملک میں ہزاروں لوگ مارے جا چکے ہیں جبکہ ان کے پسماندگان کی تعداد لاکھوں بنتی ہیں اور متاثرین کروڑوں میں موجود ہیں۔ یہ مبالغہ آرائی نہیں آپ خود ذرا اس نکتہ پر غور فرمائیں۔اس بات سے انکار تو کسی کو نہیں…

تاریخ ، انسان اور ہم

معاشرہ وہی کامیاب ہوتا ہے جہاں عدل اور انصاف اساس کے طور پر شامل ہوتا ہے۔ سستا اور فوری انصاف ہی انسانوں کے احساس تحفظ کو بڑھاوا دیتا ہے اور انہیں وہ اعتبار دیتا ہے جس پر ایک انسان دوسرے انسان کے لیے مفید اور ہمدردانہ وجود رکھنے میں عار…

ناک کی مکھی اور بلوائیوں کی نفسیات

بزرگوں سے سنا تھا کہ اس ملک میں کبھی سائیکل پر بتی نہ لگانے پر سخت چالان ہوتا تھا۔اسی طرح کبھی لوگ آوارہ گردی کے کیس سے ڈرتے تھے اب تو دہشت گردی کے کیس سے کم پر کوئی اپنی جگہ سے بھی نہیں ہلتا۔ ہمارایہ روزمرہ کا مشاہدہ ہے کہ جو لوگ اپنی ناک…

خوشیاں، جعلی نوٹ اور عید مبارک

بھوٹان وہ واحد ملک ہے اور جنوبی ایشیا کا ایک غریب ملک بھی ،جس کے ایک بادشاہ نے اپنا نظریہ 1970میں’’ بنیادی قومی خوشی‘‘ کا پیش کیا یہ توکسی بھی سقراط بقراط کو پتہ نہیں کہ انسان پہلے دکھی ہوا تھا یا خوش ؟ لیکن خوش رہنے کا ہنر سیکھنے میں وہ…

باقی آپ خود سمجھ جائیں

کچھ مسائل ہمارے اپنے ہی اجتماعی لاشعوری محرکات سے وابستہ ہیں جو اب اتنے پختہ ہوچکے ہیں کہ اب لگتا یہی ہے کہ ہم خود ہی نہیں چاہتے ہیں کہ کچھ سمجھ کرہی اس جہان فانی سے آنکھیں موند لیں ہمارے انسانوں کے عظیم فلسفی ژاں پال سارترنے نجانے کس ترنگ…

غازی نورا مینگل ،کباڑی کا کوٹ اور ایک کہانی سے جڑی سچائی

’’ وطن عزیز کو ہیرو بھی کباڑی کے کوٹ کی طرح انگریزوں کے استعمال شدہ ہی ملے ۔جبکہ اصل ہیروکو بے رحمی سے نظر انداز کیا گیا‘‘۔ اردو کے نامور لکھاری اور افسانہ نگار آغا گل بلوچستان کے عشق کی وادیوں کے پیچ و خم کے پرانے راہی ہیں ۔ انہوں نے اپنے…

کلام، مولانا کی حکایت اور انصاف کا بیانیہ

یعنی جب موسیؑ نے اس چرواہے کو تلاش کیا تو اسے کہا کہ تیرے لیے خوشخبری ہے کہ تو کوئی آداب اور ترتیب اپنے اور خدا کے مابین مت رکھو جو بھی تیرا اداس دل چاہے کہہ دے۔ تیرا کفر بھی دین ہے اور یہ دین نور جان ہے تیرا امن دنیا کے امن کا ضامن ہے۔…